۔128ویںیوم پیدائش پرمہاراجہ ہری سنگھ کو جموں میں سبھی سیاسی وسماجی جماعتوںکا خراج عقیدت

مہاراجہ صاحب بصیرت اور عوام دوست حکمرا ن تھے :ڈی پی اے پی
عظمیٰ نیوز سروس
جموں//ڈیموکریٹک پروگریسو آزاد پارٹی نے ہفتہ کو مہاراجہ ہری سنگھ کی 128 ویں یوم پیدائش منائی اور جموں و کشمیر میں امن اور ترقی کے لیے ان کی خدمات کے لیے انہیں خراج عقیدت پیش کیا۔ پارٹی کی سینئر قیادت نے جموں میں ہری سنگھ کے مجسمے پر کیک کاٹا اور جموں و کشمیر میں سماجی اقتصادی ترقی میں ان کی شاندار شراکت کا جائزہ لیا۔جنرل سکریٹری آر ایس چِب نے کہا “ہم اسے نہیں بھول سکتے کہ انہوں نے جموں و کشمیر کی آنے والی نسلوں کے لیے کیا کیا۔ وہ ایک بصیرت والے حکمران تھے اور اگر یوٹی میں ترقی اور پیشرفت نظر آتی ہے تو یہ سب ان کا تعاون تھا”۔ انہوں نے کہا کہ یونین آف انڈیا سے الحاق بھی دور اندیشی ہے اور وہ جانتے ہیں کہ یونین آف انڈیا کے ساتھ یوٹی محفوظ ہے اور موجودہ صورتحال میں یہ بالکل درست ثابت ہو رہا ہے۔ صوبائی صدر جموں جگل کشور شرما نے کہا کہ سنگھ ایک ایسے حکمران تھے جو عام لوگوں کا درد اپنے دل میں رکھتے تھے اور عام اور غریب لوگوں کو فائدہ پہنچانے کے لیے پالیسیاں اور قوانین وضع کرتے تھے۔ انہوں نے سڑکیں، کالج اور ہسپتال بنائے جہاں لوگ مفت علاج اور تعلیم حاصل کرتے رہے۔ جموں و کشمیر کی تاریخ میں کوئی بھی حکمران اتنا ہمدرد اور مہربان نہیں رہا۔ کشور نے کہا کہ انہوں نے ڈی پی اے پی کے چیئرمین غلام نبی آزاد کی جانب سے حکمران کو خراج عقیدت پیش کیا۔

بی جے پی نے مہاراجہ ہری سنگھ کا یوم پیدائش منایا
عظمیٰ نیوز سروس
جموں//ڈوگرہ حکمران مہاراجہ ہری سنگھ کے یوم پیدائش پر بھارتیہ جنتا پارٹی نے اس موقع کو منانے کے لیے پروگراموں کا ایک سلسلہ ترتیب دیا۔بھاجپا صدررویندر رینہ کے ساتھ ایم پی جگل کشور شرما، بی جے پی این ای ایم پریا سیٹھی، بی جے پی کے نائب صدر یودھویر سیٹھی، پرمود کپاہی، ریکھا مہاجن اور دیگر نے مہاراجہ ہری سنگھ مجسمہ، توی پل پر عظیم مہاراجہ کو خراج عقیدت پیش کیا۔ بی جے پی ہیڈکوارٹر، تریکوٹہ نگر، جموں میںسابق نائب وزیر اعلیٰ ڈاکٹر نرمل سنگھ، سابق نائب وزیر اعلیٰ کویندر گپتا، سابق وزیر ست شرما، سابق وزیر ڈاکٹر دیویندر منیال، سابق ایم ایل اے اشونی شرما، سابق ایم ایل سی چودھری وکرم رندھاوا اور گردھاری لال رینا، بی جے وائی ایم کے صدر ارون دیو سنگھ، او بی سی مورچہ کے صدر سنیل پرجاپتی اور دیگر نے مہاراجہ کو خراج عقیدت پیش کیا۔رویندر رینہ نے خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے کہا کہ مہاراجہ ہری سنگھ ایک بہادر ڈوگرہ حکمران تھے، جو تمام طبقات کے ساتھ برابری کا سلوک کرتے تھے اور ان کا خیال تھا کہ سب کے ساتھ انصاف میرا ‘دھرم’ ہے۔ انہوں نے ایس سی، خواتین اور پسماندہ لوگوں کے لیے کئی تاریخی اور جرات مندانہ فیصلے لیے۔ وہ پہلا حکمران تھا جس نے دلتوں کو ‘پوجا’ کرنے کی اجازت دینے کے لیے مندروں کے دروازے کھولے۔ ان کا خیال تھا کہ لڑکی کو تعلیم اور زندگی میں ترقی کے مساوی مواقع ملنے چاہئیں۔رینا نے کہا کہ مہاراجہ ہری سنگھ نے فرقہ وارانہ خطوط پر ملک کی تقسیم کے وقت، بھارت کے ساتھ رہنے کا انتخاب کیا اور مرکز میں اس وقت کی حکومت کے ساتھ الحاق کا معاہدہ کیا۔

رنوجے سنگھ کا10 پسماندہ لڑکیوں کیلئے مفت تعلیم مہم کا آغاز ، توی پل پر 128 کلو لڈو کاٹے
عظمیٰ نیوز سروس
جموں//مہاراجہ ہری سنگھ کے پوتے رنوجے سنگھ نے ان کی 128 ویں یوم پیدائش پر معروف حکمران کو دلی خراج عقیدت پیش کیا ۔رنوجے سنگھ نے دہلی پبلک سکول، جموں کا دورہ کیااور سکول کے احاطے میں منعقد کی گئی ایک خصوصی پوجا میں حصہ لیا۔ اس پروقار تقریب میں سکول انتظامیہ اور معزز مہمانوں نے شرکت کیجنہوں نے مہاراجہ ہری سنگھ کو خراج عقیدت پیش کرنے میں ایک ساتھ شامل ہوئے۔اس کے بعد رنوجے سنگھ، جو مہاراجہ ہری سنگھ سوشل اینڈ ایجوکیشن فاؤنڈیشن، جموں و کشمیر کے ٹرسٹی بھی ہیں، نے ڈی پی ایس ناگبنی میں منعقدہ ایک اور پروگرام میں شرکت کی، جہاں انہوں نے ہری سنگھ کو خراج عقیدت پیش کیا۔رنوجے سنگھ نے ‘آبھا- تماسو ما جیوترگمایا’ (مجھے اندھیرے سے روشنی کی طرف لے کر جائیں) کے عنوان سے مفت تعلیم کی مہم شروع کی ہے جس میں فاؤنڈیشن دس پسماندہ لڑکیوں کو مفت تعلیم فراہم کرے گی۔مفت تعلیم مہم کا افتتاح کرنے کے بعد، رنوجے سنگھ نے کچھ پسماندہ لڑکیوں کو ان کی تعلیم کے لیے کچھ نقد انعامات سے نوازا۔ انہوں نے بتایا کہ فاؤنڈیشن دہلی پبلک سکول ناگبانی اور دہلی پبلک سکول کٹرہ میں دس پسماندہ لڑکیوں کو تعلیم فراہم کرے گی۔بعد میں رنوجے سنگھ نے جموں کے قدیم شری رنبیریشور مندر میں بھگوان شیو کا خصوصی ابھیشیک کیا۔ بعد ازاں رنوجے سنگھ نے توی پل پر واقع ان کے مجسمے پر مہاراجہ ہری سنگھ کے یوم پیدائش کی تقریبات میں شرکت کی۔انہوں نے ایک شاندار 128 کلو کا لڈو کاٹا، جسے خاص طور پر مہاراجہ ہری سنگھ سینا نے بنایا تھا۔انہوںنے مہاراجہ کی خدمات کو یاد کیا۔

اے بی وی پی نے مہاراجہ ہری سنگھ کی جینتی منائی
عظمیٰ نیوز سروس
جموں//اکھل بھارتیہ ودیارتھی پریشد، سنٹرل یونیورسٹی آف جموں یونٹ نے مہاراجہ ہری سنگھ جی کے یوم پیدائش کے موقع پر ایک متحرک ثقافتی پروگرام کا انعقاد کیا۔اس موقع پر مہمان خصوصی وائس چانسلر پروفیسر سنجیو جین، رجسٹرار پروفیسر یشونت سنگھ اور مہمان اعزازی ڈاکٹر پرمیندر سنگھ، ممبر، نیشنل ایگزیکٹیو کونسل، اے بی وی پی نے اپنی موجودگی کے ساتھ اس تقریب کو سراہا۔ پروفیسر سنجیو جین نے مہاراجہ ہری سنگھ کی طرف سے جموں و کشمیر کے لیے دیے گئے نمایاں تعاون کی تعریف کی اور ہر ایک کو ان کی عظیم قیادت اور ورثے کے بارے میں خود کو آگاہ کرنے کی ترغیب دی۔پروفیسر یشونت سنگھ نے مہاراجہ ہری سنگھ کی جموں و کشمیر کو ہندوستان میں ضم کرنے کی کوششوں پر روشنی ڈالی، اور ہندوستان کے اٹوٹ انگ کے طور پر خطے کی اہمیت پر زور دیا۔ڈاکٹر پرمیندر سنگھ نے جموں اور کشمیر کے ہندوستان کے ساتھ الحاق کا سہرا مہاراجہ ہری سنگھ کو دیا، اور جموں کی سنٹرل یونیورسٹی کے قیام میں ودیارتھی پریشد کے اہم کردار پر زور دیا۔

کانگریس نے توی پل پر مہاراجہ کوخراج عقیدت پیش کیا
عظمیٰ نیوز سروس
جموں//جے کے پی سی سی صدروقار رسول وانی کے ساتھ ورکنگ صدر رمن بھلا و دیگر لیڈران او ر کارکنوں نے توی پل پر مہاراجہ ہری سنگھ جی کو ان کے مجسمہ کی جگہ پر ہر طبقے کے لوگوں کی بڑی تعداد کے درمیان پھول چڑھائے۔کانگریس کے سینئر قائدین پارٹی ہیڈکوارٹر شہیدی چوک جموں میں جمع ہوئے اور گاڑیوں کے قافلے میں توی پل پر مہاراجہ کے مجسمے کی طرف بڑھے۔ مہاراجہ ہری سنگھ جی کو زبردست خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے وقار رسول وانی نے بطور حکمران ان کی بے پناہ خدمات کو یاد کیا، جنہوں نے اعلان کیا کہ بطور حکمران ان کا کوئی مذہب نہیں ہے، ان کا مذہب سب کے لیے انصاف ہے۔ ان کے دستخطوں سے پورا جموں و کشمیر ہندوستان کا اٹوٹ انگ بن گیا۔انہوں نے کہا کہ بدقسمتی سے جس تاریخی ریاست پر انہوں نے حکمرانی کی، اسے توڑ دیا گیا، تقسیم کیا گیا اور ان کی ریاست کے مستقل باشندوں کے تمام حقوق اور تحفظات کو بی جے پی حکومت نے من مانی اور یکطرفہ طور پر ختم کر دیا ہے۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ تاریخی ریاست کو مکمل ریاست کا درجہ اور حقوق دینے کے ساتھ ساتھ جموں و کشمیر کے باشندوں کو مزید تاخیر کے بغیر جمہوریت بحال کی جائے۔ورکنگ صدر رمن بھلا نے بھی مہاراجہ ہری سنگھ کو زبردست خراج عقیدت پیش کیا اور مطالبہ کیا کہ مہاراجہ کی تاریخی ڈوگرہ ریاست کو فوری طور پر بحال کیا جائے۔

مہاراجہ ہری سنگھ کی میراث خطے کے تاریخی بیانیے کو متاثر کرتی رہتی ہے: سلاتھیا
عظمیٰ نیوز سروس
وجے پور //مہاراجہ ہری سنگھ کو ان کے 128 ویں یوم پیدائش پرخراج عقیدت پیش کرتے ہوئے سابق وزیر اور پردیش بی جے پی کے نائب صدر سرجیت سنگھ سلاتھیا نے کہا کہ سماجی انصاف اور نظم و نسق کے بارے میں مہاراجہ کے وژن کے علاوہ کئی دیگر اصلاحات نے انہیں ایک عظیم شخصیت بنا دیا۔ عوام کا حکمران اور اس کی میراث خطے کے تاریخی بیانیے کو متاثر کرتی رہتی ہے۔انہوں نے وجے پور اسمبلی حلقہ کے گورہا میں خراج عقیدت پیش کرنے کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے کہا”آج ہم مہاراجہ ہری سنگھ جی کی یوم پیدائش کی یاد مناتے ہیں، ایک ممتاز اور بصیرت والے رہنما جنہوں نے ریاست جموں و کشمیر کی تاریخ میں ایک اہم کردار ادا کیا، مہاراجہ صاحب کی میراث نسلوں کو متاثر کرتی رہتی ہے، جو ہمیں ان کی بے پناہ شراکت کی یاد دلاتی ہے‘‘۔انہوں نے کہا کہ مہاراجہ ہری سنگھ نہ صرف ایک مہربان حکمران تھے بلکہ اپنی مملکت میں جدید کاری اور اصلاحات کے حامی بھی تھے۔انہوں نے کہا کہ 26 اکتوبر 1947 کو مہاراجہ ہری سنگھ جی کے ذریعہ ہندوستان سے الحاق کے دستاویز پر دستخط کرنے سے جموں و کشمیر کو نو آزاد ملک میں انضمام کی نشان دہی ہوئی۔ انہوں نے کہا کہ اس اہم فیصلے نے خطوں کی ترقی اور ہندوستان کے جمہوری عمل میں اس کی شرکت کی بنیاد رکھی۔