یو ٹی سطح کی بینکرس کمیٹی کی میٹنگ

 جموں//حکومت کے ’بیک ٹوولیج‘ پروگرام کے دوران جموں کشمیر بینک کے رول کوسراہتے ہوئے جموں کشمیر بینک کے چیئرمین راجیش کمار چھبر نے مرکزی زیرانتظام علاقہ جموں کشمیرمیں مختلف سپانسرڈ اسکیموں کی عمل آوری میں پرائیویٹ سیکٹر کے بینکوں کی کارکردگی کوغیرتسلی بخش قرار دیااور  ایسے پرائیویٹ سیکٹر بینکوں کوصلاح دی کہ انہیں اپنی کارکردگی کو بہتر بنانا ہوگا۔یہاں مرکزی زیرانتظام علاقہ کی سطح کی بینکرس کمیٹی ’UTLBC‘کی میٹنگ کی صدار کرتے ہوئے چیف سیکریٹری نے کہا کہ جموں کشمیرکی معاشی ترقی کو یقینی بنانے کیلئے بینکوں کو حکومت کے شانہ بشانہ چلنا ہوگا۔چیف سیکریٹری نے ترجیحی سیکٹر میں اسٹیٹ بینک آف انڈیا کی کوششوں کو سراہا۔چیف سیکریٹری نے بینکوں کی اُن خدمات کی بھی ستائش کی جوانہوں نے کووِڈ- 19کی عالمگیر وباء کے دوران انجام دیں ۔میٹنگ کے دوران مرکزی زیرانتظام علاقہ کی سطح کی بینکرس کمیٹی کے کنوینراورجموں کشمیر بینک کے چیئرمین راجیش کمار چھبر نے کہا کہ مرکزی زیرانتظام علاقہ میں تمام بینکوں نے31دسمبر2020تک 894866افراد کو 22,472.17کروڑ روپے قرضے واگزار کئے جو مالی لحاظ سے رواں سال کے ہدف کا50.35فیصد ہے اور افرادی لحاظ سے ہدف کا58.18فیصد ہے ۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ چار بڑی سرکاری سپانسرڈ اسکیموں کے تحت بینکوں نے 13536 افراد میں 376.71کروڑ روپے واگزار کئے ہیں اورکسان کریڈٹ کارڈکی صدفیصد عمل آوری کے اقدامات کے تحت جموں کشمیرمین9.78لاکھ کسانوں کو5900کروڑ روپے کی مالی معاونت دیدی گئی ہے۔البتہ چیف سیکریٹری نے کہا کہ التواء میں پڑے تمام کے سی سی کیسوں کومالی سال اختتام ہونے سے پہلے نپٹایا جائے گا۔انہوں نے بینکوں کو ہدایات دیں کہ وزایراعظم سواندھی یوجنایعنی اسٹریٹ وینڈر اسکیم کے تحت ہرمستحق کو فائدہ ملنا چاہیے اور رواں سال کے اختتام تک ایسے مزید6000کیسوں کو سپانسر کیا جائے گا۔انہوں کی ڈییبٹ کارڈ کی ترسیل کو عام بنانے پرزوردیا تاکہ سماج میں نقدی کے بجائے ڈیجٹل لین دین کو فروغ حاصل ہو۔ میٹنگ کے دوران فاینانشل کمشنرخزانہ محکمہ ارون کمار مہتہ نے کہا کہ معاشی ترقی کاانحصار بہت چھوٹی،چھوٹی اور درمیانہ درجے کے کاروباری شعبے کی ترقی پر ہے لہذااس شعبے کی طرف توجہ دینے کی ضرورت ہے اوررواں مالی سال کے اختتام تک سارے اہداف کوپورا کرنے کی کوششیں تیز ہونی چاہیے ۔انہوں نے کہا کہ ’بیک ٹوولیج‘پروگرام کے دوران سولہ ہزار افراد کو فائدہ پہنچا ہے جبکہ مالی برس کے آخر تک مجموعی طور 20ہزار افراد کو مالی راحت پہنچائی جائے گی ۔انہوں نے تمام بینکوں اور متعلقہ سرکاری اداروں پرزوردیا کہ وہ جموں کشمیرکی معیشت کو پٹری پرلانے کے لئے اجتماعی کوششیں کریں۔میٹنگ میں فائنانشل کمشنر فائنانس ڈاکٹر ارون کمار مہتا، پرنسپل سیکریٹری ہاؤسنگ اینڈ اربن ڈیولپمنٹ دھیرج گپتا، پرنسپل سیکریٹری زراعت و پشو پالن نوین کمار چودھری ،  منسٹری آف فائنانس کے اے کے ڈوگرا، آر بی آئی کے رجینل ڈائریکٹر کمل پاٹھک، NABARD کے چیف جنرل منیجر آر کے شری واستو،  ڈویژنل کمشنر جموں سنجیو ورما، جموں، کٹھوعہ اور سانبہ کے ڈپٹی کمشنر ، جموں وکشمیربینک کے چیئرمین و منیجنگ ڈایئریکٹر راجیش کمار چھبر جو کہ جے کے یو ٹی ایل بی سی کے کنوینر بھی ہیں اور دیگر مختلف سرکاری محکموں کے نمائندے شامل تھے۔