یوکرائن اور روس کے درمیان جنگ کے بادل

کیف ? ماسکو //یوکرائن نے روس کی جانب سے ممکنہ حملے کے بڑھتے ہوئے خطرات سے خبردار کردیا۔ برلن متعینہ یوکرائنی سفیر اندرچ میلنک نے اپنے بیان میں یوکرائن کی سرحد پر روسی دستوں کی تازہ ترین نقل و حرکت پر شدید تحفظات کا اظہار کیا۔ انہوں نے کہا کہ 2014ء  میں مشرقی یوکرائن اور کریمیا کے کچھ حصوں پر روسی قبضے کے بعد سے روس کے یوکرائن پر حملے کا خطرہ کبھی اتنا شدید نہیں تھا، جتنا اس وقتہے۔ یوکرائن کے علاوہ مغربی ممالک کے خفیہ اداروں نے بھی کہا ہے کہ یوکرائنی سرحد پر روسی فوجی تعیناتی میں بڑے پیمانے پر اضافہ نظر آ رہا ہے۔ یوکرائن کی مشرقی سرحد پر اور روسی سرحد سے متصل یوکرائن کے مقبوضہ صنعتی علاقے ڈونباس میں ایک لاکھ 14ہزار روسی فوجی تعینات ہیں۔دوسری جانب برطانوی وزیر اعظم بورس جانسن نے اپنے بیان میں کہا کہ یوکرائن اور پولینڈ کی سرحدوں پر مہم جوئی ایک المناک غلطی ہو سکتی ہے۔