یاسین ملک صدر اسپتال گئے، پیلٹ متاثرین سے ملاقات کے دوران حکومت پر برسے

سرینگر// لبریشن فرنٹ چیئرمین محمد یاسین ملک نے صدر اسپتال سرینگر میں زیر علاج کئی پیلٹ متاثرین کی عیادت کے دوران کہا کہ حکمران طبقہ کشمیری جوانوں کو مارڈالنے، انہیں زخمی کردینے اور ان کی آنکھیں چھین لینے کی پالیسی پر گامزن نظر آرہا ہے اور خاص طور پر پیلٹ جیسے مہلک ہتھیار کا استعمال کرکے انسانوں کو بصارت سے محروم کردینا سراسربے رحمی کا عکاس ہے ۔انہوں نے کہا کہ ایسا معلوم ہوتا ہے کہ ریاستی سرکار نے ناگپور کے احکامات پر عمل پیر اہوتے ہوئے زیادہ سے زیادہ کشمیری جوانوں کی آنکھوں پر پیلٹ چلانے اور انہیں اندھا بناکر ناکارہ زندگی بسر کرنے پر مجبور کرنے کا فیصلہ کررکھا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ  اپنے ٹارگٹ کو حاصل کرنے کیلئے پیلٹ گن جیسے ہتھیار کو زیادہ سے زیادہ استعمال کرتے رہنے کی ضد اپنائی جارہی ہے۔ یاسین ملک نے کہا کہ نئی دلینیز پی ڈی پی کی سربراہی میں قائم موجودہ ریاستی سرکار کشمیری جوانوں کیلئے خونخوار بن چکے ہیں جن کے خون کی پیاس کسی بھی صورت میں ختم یا کم ہونے کا نام تک نہیں لے رہی ہے۔یاسین ملک نے کہا کہ تاریخ کے صفحات پر موجودہ حکمرانوں کو قاتل اور بڑے پیمانے پر لوگوں کو اندھا بنانے والوں کی حیثیت سے یاد رکھا جائے گا کیونکہ انہوں نے نہ صرف یہ کہ ہزاروں لوگوں کو تہہ تیغ کیا ہے بلکہ پیلٹ تشددکے ذریعے ہزاروں کی آنکھوں کی بصارت بھی چھین لی۔انہوں نے کہا کہ ایک ہتھیار جو اصلاً جانورو ں اور پرندوں کے شکار کیلئے استعمال ہوتا ہے کو کشمیر میں انسانوں کو قتل کرنے، انہیں اپاہج بنانے اور انکی بینائی  چھین لینے کیلئے استعمال کیا جارہا ہے اور حیران کن طور پر عالمی برادری اس سب صورت حال کو مکمل خاموشی کے ساتھ دیکھ رہی ہے۔ یاسین ملک  فرنٹ کے نائب چیئرمین شوکت احمد بخشی،زونل آرگنائزر بشیر احمد کشمیری اور امتیاز احمد کے ہمراہ ایس ایم ایچ ایس ہسپتال پہنچے تھے اور وہاں کئی مجروحین جن میںقیصر احمد بٹ، عمر فاروق، صور ت مجید بٹ، فیصل احمد لون، عرفان احمد ڈار، گلزار احمد، عاقل احمد، اشفاق احمد وانی اور شاکر احمدشامل ہیں کے پاس جاکر ان زخمی افراد جن میں سے اکثر کا تعلق جنوبی کشمیر کے اضلاع سے ہے‘ کا حال دریافت کیا اور ان کے غم زدہ اور تباہ حال افراد خانہ کی ڈھارس بندھائی۔