ہ7 ماہ میں کاٹنے کے 1190 کیس رپورٹ ، صرف ستمبر میں 261 کیس | راجوری میں آوارہ کتوں کی خونچکانی میڈکل کالج ہسپتال میں کتوں کے کاٹنے سے متعلق 95 فیصد کیس درج ،مقامی لوگوں میں تشویش

سمیت بھارگو

راجوری// راجوری ضلع کے علاقوں بالخصوص قصبوں میں آوارہ کتے لوگوں پر دہشت پھیلا رہے ہیں کیونکہ راجوری کے ہسپتال میں یکم اپریل سے اب تک کتوںکے کاٹنے کے 1190 واقعات رپورٹ ہوئے ہیں جن میں سے صرف ستمبر کے مہینے میں 261 کیس رپورٹ ہوئے ہیں۔ان جانوروں کے کاٹنے کے زیادہ تر کیس آوارہ جانوروں کی نوعیت کے ہوتے ہیں جبکہ پچانوے فیصد کیس کتے کے کاٹنے کے ہوتے ہیں۔جی ایم سی راجوری کا ایسوسی ایٹیڈ ہسپتال ایک نوڈل ہیلتھ انسٹی ٹیوٹ ہے جو کتوںکے کاٹنے کے کیسوں کے ساتھ ساتھ ریبیز سے متاثرہ کیسوں سے نمٹنے کےلئے میڈیکل کالج میں کمیونٹی میڈیسن کے شعبہ کے ساتھ نوڈل ڈیپارٹمنٹ ہے جو اینٹی ریبیز کلینک چلاتا ہے۔دستیاب اعداد و شمار کے مطابق رواں سال یکم اپریل سے 9 نومبر تک ہسپتال میں جانوروں کے کاٹنے کے 1190 کیس درج کیے گئے ہیں۔ان میں سے صرف 0.25 فیصد کیس بالواسطہ نوعیت کے ہیں جن میں ریبیز سے متاثرہ آوارہ کتے نے کسی بھی دودھ دار جانور کو کاٹ لیا جس کا دودھ لوگ پی چکے ہیں اور ایسے افراد بالواسطہ نوعیت میں وائرس کی منتقلی کے خدشے کے باعث ہسپتال پہنچے۔باقی تمام کیس براہ راست کاٹنے کی نوعیت کے ہیں جن میں لوگوں کوکتوں نے کاٹا ہے اور ان میں چھیانوے سے سات فیصد کیس آوارہ جانوروں کے کاٹنے کے ہیں جبکہ باقی ایک پالتو جانوروں کے کاٹنے کے ہیں۔ڈیٹامیں مزید انکشاف کیا گیاکہ آوارہ کتوں کے کاٹنے کے واقعات زیادہ تر آوارہ کتوں کے کاٹنے کے ہوتے ہیں جبکہ بلیوں، گھوڑوں اور بندروں سمیت دیگر آوارہ جانوروں کے کاٹنے کے بہت کم واقعات ہوتے ہیں۔حکام نے بتایا کہ آوارہ کتوں کے کاٹنے کے کیس زیادہ تر شہری علاقوں سے ہوتے ہیں اور ان مریضوں میں مختلف عمر کے افراد خصوصاً مرد شامل ہیں۔انہوں نے کہا کہ جی ایم سی اے ایچ راجوری کے اینٹی ریبیز کلینک میں اتنی بڑی تعداد میں مریضوں کا پہنچنا ایک پہلو سے مثبت ہے کہ لوگ جانوروں کے کاٹنے کے بعد ریبیز کے انفیکشن کے امکان سے واقف ہیں اور اینٹی ریبیز کلینک میں رپورٹ کرتے ہیں لیکن یہ تشویش کا باعث بھی ہے۔ لوگوں کی بڑی تعداد آوارہ جانوروں کے کاٹ رہی ہے۔کلینک میں ماہ وار رجسٹر ہونے والے کیس میں اپریل کے مہینے میں 176، مئی میں 171، جون میں 136، جولائی میں 165، اگست میں 141، ستمبر میں 261، اکتوبر میں 80 جبکہ نومبر کے پہلے نو دنوں میں 60 کیس رجسٹر ہوئے ہیں۔ رابطہ کیے جانے پر، جی ایم سی ایسوسی ایٹیڈہسپتال راجوری کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ، ڈاکٹر محمود ایچ بجاڑ نے بتایا کہ ہسپتال میں ایک مخصوص اینٹی ریبیز کلینک چلایاجا رہا ہے جہاں اینٹی ریبیز ویکسین/دوائی دستیاب ہے۔انہوں نے مزید لوگوں سے اپیل کی کہ جب بھی انہیں کوئی آوارہ جانور کاٹے تو کلینک کا دورہ کریں جبکہ پالتو جانوروں کو ہمیشہ معیاری ویکسی نیشن پروٹوکول کے مطابق ریبیز کے ٹیکے لگوائے جائیں۔اس دوران راجوری کے لوگوں نے تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ آوارہ کتوں کی دہشت خاص طور پر شہری علاقوں میں لوگوں کے لیے درد سر بن رہی ہے اور اس کا براہ راست اثر لوگوں کی زندگی پر پڑ رہا ہے۔ان کا کہنا تھا کہ سڑکوں اور گلیوں میں گھومنے والے آوارہ کتے اکثر لوگوں پر خاص طور پر رات کے اوقات میں حملہ کرتے ہیں اور اس طرح کے متعدد واقعات ماضی میں بھی رونما ہو چکے ہیں جب دو پہیہ گاڑیوں کو حادثات کا سامنا کرنا پڑتا ہے جب ان گاڑیوں کے ڈرائیور آوارہ افراد کے تعاقب کے بعد اپنا کنٹرول کھو بیٹھتے ہیں۔ راجوری سے تعلق رکھنے والے محمد آزاد نے کہا کہ آوارہ کتوں کی لعنت سے نمٹنے کے لیے مناسب حکمت عملی کی ضرورت ہے۔انکاکہناتھا’’رات کے اوقات میں سڑکوں پر اکیلے چلنا جس میں ہاتھ میں چھڑی جیسی کوئی شے نہ ہو، ایک خطرناک کام ہے کیونکہ سڑکوں پر گھومنے والے آوارہ کتے کب آپ کو گھات لگاتے ہیں‘‘۔انہوں نے کہا کہ آوارہ جانور کے کاٹنے والے شخص کو بہت سے مسائل سے گزرنا پڑتا ہے جن میں خاص طور پر ریبیز سے متاثر ہونے کے خوف کا نفسیاتی دباؤ بھی شامل ہے جو مناسب اور بروقت علاج نہ ہونے پر جان لیوا بھی ہو جاتا ہے۔ایشان کمار نے اس مسئلے سے نمٹنے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے کہا کہ تمام متعلقہ سرکاری ایجنسیوں کو فوری طور پر ایک مناسب حکمت عملی تیار کرنی چاہیے تاکہ راجوری ضلع کے شہری علاقوں میں آوارہ کتوں کی طرف سے پھیلائی جانے والی دہشت کو کم کیا جا سکے۔صدر میونسپل کونسل راجوری، محمد عارف نے کہا کہ کونسل اس مسئلے سے نمٹنے کے لیے ایک پروجیکٹ پر کام کر رہی ہے جس کے لیے جلد ہی ای موڈ پر ٹینڈر جاری کیے جائیں گے تاکہ ایسی فرموں کو مدعو کیا جا سکے جو آوارہ کتوں میں پیدائش پر قابو پانے کے لیے مشق کر سکیں۔