ہائی ڈینسٹی شجر کاری کو فروغ دینے پر گورنر کے مشیر کا زور

سرینگر//گورنر کے مشیر خورشید احمد گنائی نے یہاں ایک میٹنگ میں زراعت اور باغبانی شعبوں میں عملائی جارہی مختلف مرکزی اور ریاستی سکیموں کی عمل آوری کا جائیزہ لیا۔صلاحکار نے پی ایم ڈی پی کے تحت عملائی جارہی مختلف سکیموں اور پروجیکٹوں کا جائیزہ لیتے ہوئے ان سکیموں کو من عن عملانے پر زور دیا تا کہ کسان اور باغ مالکان ان سے مستفید ہوسکیں۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ کیپکس اور نبارڈ کے تحت زراعت شعبۂ میں مختص 86.36 کروڑ روپے میں سے24.18 کروڑ روپے رواں سال ستمبر کے آخر تک خرچ کئے گئے ہیں جبکہ پی ایم ڈی پی کے تحت محکمہ زراعت نے16.86 کروڑ روپے خرچ کئے ہیں۔ اس کے علاوہ مختلف مرکزی سکیموں کے تحت رواں مالی سال کے لئے66.10 کروڑ روپے واگذار کئے گئے ہیں۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ رواں مالی سال کے لئے دستیاب بجٹ میں سے ابھی تک91.87 کروڑ روپے واگذار کئے گئے ہیں۔میٹنگ میں محکمہ زراعت میں عملائی جارہی مختلف سکیموں کی پیش رفت پر بھی تبادلہ خیال ہوا۔میٹنگ میں بتایا گیا کہ باغبانی شعبۂ میں دستیاب408.89 کروڑ روپے میں سے اب تک134.33 کروڑ روپے دستیاب کرائے گئے ہیں۔میٹنگ میں مزید بتایا گیا کہ ریاست میں763.88 لاکھ میوہ درخت ہیں جن میں سے563.74 لاکھ درخت میوہ دیتے ہیں۔ریاست میں447 فروٹ نرسریوں میں سے138 نرسریاں پبلک سیکٹر جبکہ339 پرائیویٹ سیکٹر میں ہیں۔باغبانی شعبۂ میں پیداواریت میں اضافہ پر زور دیتے ہوئے صلاحکار نے کہا کہ ریاست میں اوسطاً فی ہیکٹر اراضی پر10 سے11 میٹرک ٹن کی پیداوار حاصل ہوتی ہے جبکہ ترقی یافتہ ممالک میں اسی اراضی پر40 سے50 میٹرک پیداواریت حاصل ہوتی ہے۔ انہوں نے کہا کہ پیداواریت میں خاطر خواہ اضافہ کے لئے روائتی باغبانی کے بجائے ہائی ڈینسٹی باغبانی کی ضرورت ہے۔ انہوں نے دونوں شعبوں میں پیداواریت میں اضافہ کے لئے باغبانوں کو جدید ٹیکنالوجی اور رہنمائی فراہم کرنے پر زور دیا۔ انہوں نے مختلف سکیموں کی معیاد بند تکمیل کو یقینی بنانے اور کسانوں کو رین واٹر ہارویسٹنگ کو بروئے کار لانے کے بارے میں جانکاری دینے، آبپاشی کی مانگوں کو پوراکرنے کے لئے کمیونٹی واٹر سٹوریج ڈھانچے تعمیر کرنے، باسمتی چاول کی بہتر مارکیٹنگ اور دُور دراز علاقوں میں کسانوں کی جانکاری کے لئے بیداری پروگراموں کا اہتمام کرنے پر زور دیا تا کہ پیداواریت میں سائنسی طریقے کار اور ٹیکنالوجی کو عملا کرخاطر خواہ اضافہ ہوسکے۔میٹنگ میں سیکرٹری زراعت منظور احمد لون، وائس چانسلر سکاسٹ نذیر احمد، ڈائریکٹر زراعت کشمیر / جموں، ڈائریکٹر باغبانی کشمیر/ جموں، ڈائریکٹر فائنانس ہارٹی کلچر۔ زراعت، ڈائریکٹر پلاننگ سکاسٹ، ڈائریکٹر سی اے اے جموں، ایم ڈی ، ایچ پی ایم سی،ڈائریکٹر سریکلچر اور محکمہ کے دیگر سنئیر افسران نے شرکت کی۔