گھبر گلیرکے دریا پر پل نہ دارد

کوٹرنکہ // بدھل کے گھبر گلیر علاقے کی عوام کو مقامی نالے پر پل نہ ہونے کی وجہ سے سخت مشکلات کاسامناہے اور خاص طور پر طلباء کو روزانہ نالے کے بیچ سے گزر کر سکول آناجاناپڑتاہے جس دوران انہیں جان کا خطرہ بھی درپیش رہتاہے ۔مقامی لوگوں کاکہناہے کہ سکولی بچے روزانہ جان ہتھیلی پررکھ کر عبور و مرور کرتے ہیں اور ان کی زندگیوں کو خطرہ ہے ۔انہوں نے نالہ پر پل تعمیر کرنے کی مانگ کرتے ہوئے کہاکہ اس اقدام سے ایک بڑی آبادی کو فائدہ پہنچے گا۔نائب سرپنچ ارشد حسین میراورمحمد شریف نے کشمیر عظمیٰ سے بات کرتے ہوئے کہاکہ گورنمنٹ مڈل سکول گھبر، گورنمنٹ ہائی سکول گھبر، ہائراسکینڈری سکول بدھل اور کئی نجی تعلیمی اداروں میں جانے والے طلباء کو روزانہ نالے کے بیچ سے گزرناپڑتاہے ۔انہوں نے بتایاکہ اس مقام پر پل تعمیر کیاجائے ۔محمد شریف نے بتایا کہ گزشتہ سال دو سکولی بچیاں نازیہ اختر و روضیہ کوثر اسی نالے کو عبور کرتے ہوئے بہہ گئیں جس دوران ان کو شدید چوٹیں آئیں لیکن اس واقعہ کے بعد بھی حکام نے پل کی تعمیر کے حوالے سے کوئی اقدام نہیں کیا ۔