گپکار الائنس کی میٹنگ میں قرارداد منظور| 4اگست 2019 کی پوزیشن بحال کی جائے

سرینگر// گپکارعوامی اتحاد نے اقامتی قوانین میڈیا پر پابندی ، سرکاری ملازمین کو ڈرانے،اگست 2019 کے بعد جموں و کشمیر کے لوگوں پر مسلط کئے گئے مسلسل ایگزیکٹو احکامات کو عامرانہ قرار دیتے ہوئے آئین ہند کے دفعہ 370اور35اے کالعدم قرار دینے کے فیصلے کوغیر آئینی قرار دیا ہے۔ منگل کو ڈاکٹر فاروق عبداللہ کی رہائش گاہ پر منعقدہ میٹنگ میں قرار د منظور کرتے ہوئے کہا گیا ہے کہ ریاستی درجہ کی بحالی اور آئینی پوزیشن کو بحال کیا جائے۔کئی گھنٹوں تک ڈاکٹر فاروق کی سربراہی میں منعقدہ اجلاس کے بعد منظور شدہ قرار داد میں کہا گیا  ہے کہ تاریخی ریاست کو2مرکزی زیر انتظام والے خطوں جموں کشمیر اور لداخ میں تقسیم کرنے کیقانون سازی نے ایک بڑا سیاسی خلا اور   غیر یقینی صورتحال پیدا کی ہے۔ قرار داد میں کہا گیا ہے’’یہ انتہائی بدقسمتی ہے کہ آئین کی خلاف ورزی کے طور پر اس منسوخی کے خلاف عدالتی چیلنج دو سال بعد بھی سپریم کورٹ کے سامنے زیر التوا ہے۔‘‘قرار داد میں مزید کہا گیا ہے’’شہری آزادی اور جمہوری حقوق پر دبائو جاری ہے۔ یو اے پی اے،پی ایس اے جیسے سخت قوانین کے تحت جمہوری حقوق پر حملے جاری ہیں جبکہ سینکڑوں لوگ بغیر کسی الزام کے بھی حراست میں ہیں‘‘۔ قرارداد میں مزید کہا گیا ہے’’امن و امان‘ یا’پتھراؤ کے معاملات‘میں ملوثین کیلئے پاسپورٹ اور سرکاری خدمات کی عدم منظوری کیلئے نئے احکامات جاری کیے جا رہے ہیں جبکہ یہ قدرتی انصاف کے اصول کی نفی کرتا ہے کہ پولیس رپورٹ کوجرم قرار دے کر اور ان تمام خدمات سے کی فراہمی سے انکار کیا جائے‘‘۔ قانون اس بات کی نشاندہی کرتا ہے کہ جرم ثابت ہونے تک ہر کوئی بے گناہ ہے۔ قرار داد میں کہا گیا کہ سابق ریاست کے مستقل باشندوں کی حیثیت کو بے کار بنا کر ، اس طرح نوکریوں اور زمین کے حقوق کا تحفظ من مانی طور پر چھین لیا گیا ہے جس سے علاقوں اور برادریوں میں عدم تحفظ کا احساس مزید گہرا ہوگیا ہے۔ قرار داد میں جموں کشمیر کی معیشت کے بارے میں ذکر کرتے ہوئے کہا کہ خطے کی معیشت روز بروز بد سے بدتر ہوتی جا رہی ہے کیونکہ حکومت کے ترقی ، سرمایہ کاری اور روزگار کے بڑے وعدے ختم ہو گئے ہیں۔
قرار داد میں کہا گیا’’ روزگار کے نئے مواقع پیدا کرنے کے بجائے ، روزانہ اجرت دینے والے ، آرام دہ اور پرسکون مزدور ، سکیم کے کارکن اور دیگر کنٹریکٹ ملازمین کو یا تو باقاعدگی سے اجرت نہیں مل رہی ہے یا ان کی اجرت سے مکمل طور پر انکار کیا جا رہا ہے جبکہ زراعت، باغبانی ، سیاحت ، دستکاری ، نقل و حمل اور دیگر شعبے گہرے بحران میں ہیں۔‘‘عوامی اتحاد برائے گپکار اعلامیہ کی جانب سے منظورہ شدہ قرار داد میںکہا گیا’’ اقامتی قوانین ، میڈیا پر پابندی ، سرکاری ملازمین کو ڈرانے دھمکانے ، ملازمت پر امتیازی قوانین اور اگست 2019 کے بعد کے مسلسل ایگزیکٹو احکامات آمرانہ ڈکٹیٹ ہیں جو جموں و کشمیر کے لوگوں پر مسلط کیے گئے ہیں۔‘‘ انہوں نے کہا کہ کچھ ملازمین کو اپنی بات رکھنے کا موقع دیے بغیر ان کی برطرفی نے عام طور پر ملازمین میں ایک خوف نفسی پیدا کر دی ہے جبکہ مقامی افسران کو یک طرف کیا جا رہا ہے اور اسٹیٹ کیڈر کا خاتمہ لوگوں کو بے اختیار کرنے کی طرف ایک اور قدم ہے۔‘‘قرار داد میں کہا گیا کہ کشمیر میں سیاسی کارکنوں سمیت لوگوں کی بے دریغ ہلاکتیں حکومت کے امن اور معمول کے دعووں کو غلط سمجھتی ہیں۔  اجلاس میں سیاسی کارکنوں سمیت غیر مسلح افراد کے قتل کی غیر واضح طور پر مذمت کی گئی۔ منظور شدہ قرار داد میں  اس بات کو لازمی قرار دیا گیا کہ  جموں و کشمیر کے ہر علاقے اور برادری کے لوگ متحد رہیں اور جھوٹی مہمات اور ان کو مزید تقسیم کرنے اور کمزور کرنے کی کوششوں کا شکار نہ ہوں۔ اتحادی جماعتوں کا کاننا ہے کہ نہ صرف کشمیر میں ، بلکہ جموں اور لداخ کے علاقوں میں بھی مرکز اور مقامی انتظامیہ کی طرف سے اپنائے گئے غیر جمہوری طریقہ کار کے اثرات پر زبردست عدم اطمینان ہے۔ قرار دار میں مزید کہا گیا’’ سابق ریاست کے تمام علاقوں کے لوگوں نے بی جے پی کے ’’نیا کشمیر‘‘کے دعوے پر سوال اٹھانا شروع کر دیا ہے جبکہ لوگ جاننا چاہتے ہیں کہ انہوں نے نیا کشمیر کے نقطہ نظر کو تباہ کر کے کیا حاصل کیا ہے جو عوام کی جانب سے خود مختار حکومت اور جاگیرداروں کے خلاف سخت اور طویل جدوجہد کے ذریعے تیار کیا گیا تھا۔ قرار داد میں کہا گیا کہ دو ماہ قبل نئی دہلی میں جموں و کشمیر کے  لیڈروںسے ملاقات کے دوران وزیر اعظم کے ’’ دلی کی دوری اور دل کی دوری ‘‘ کے نعرے کے بعد کوئی خاص بات سامنے نہیں آئی۔ علاقے کے پریشان حال لوگوں کو کچھ ریلیف دینے کے لیے اعتماد سازی کی پیمائش نہیں کی گئی۔انہوں نے کہا کہ ریاستی حیثیت جیسا کہ 5 اگست 2019 سے پہلے موجود تھی کواسے بحال کیا جانا چاہیے جبکہ تمام سیاسی قیدیوں کو فوری رہا کیا جائے اور سخت قوانین کے اندھا دھند استعمال کو ختم کیا جانا چاہیے۔
 
 

نوجوانوں کا مستقبل مخدوش

پہچان خطرے میں: ڈاکٹر فاروق

سرینگر/بلال فرقانی/ نیشنل کانفرنس صدر ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا ہے کہ جموں کشمیر سے پارلیمانی اور آئینی حق چھینا گیا ہے اور جس بنیاد پر بھارت کے ساتھ جموں کشمیر کا الحاق ہوا تھا وہ واپس لیا گیا ہے۔گپکار الائنس کی میٹنگ سے خطاب کے دوران انہوں نے کہا کہ و زیر اعظم ہند دل جیتنے کی بات کرتے ہیں،لیکن ڈنڈوں سے دل جیتے نہیں جاتے۔ڈاکٹرفاروق اپنی تقریر کے دوران جذباتی بھی ہوئے اوراُن کی آنکھیں اشکبار بھی ہوئیں۔انہوں نے افسردہ لہجے میں کہاکہ مجھے اسبات کابڑادُکھ ہے کہ ہماری شناخت اورہماری پہچان خطرے میں ہے ،ہمارے مفادات محفوظ نہیں اورہماری نئی پود،نئی نسل اورنوجوانوںکامستقبل مخدوش ہے ۔ انہوں نے سوالیہ انداز میں پوچھا’’ہم کون سے دشمن ہیں کہ ہم بات بھی نہیں کرسکتے، ہم نے کھبی ملک کے خلاف بات نہیں کی‘‘۔نیشنل کانفرنس صدر نے کہا کہ کیا انہیں جموں کشمیر کے بارے میں جاننے کا کوئی بھی حق نہیں ہے؟۔انکا کہنا تھا’’ہمارا حال کیا ہے،کہاں ہم پہنچے،گیس اور پیٹرول کی قیمتیں کہاں پہنچی،کیا ہمیں ریاست کے بارے میں جاننے کا حق نہیں ہے‘‘۔انہوں نے سوال کرتے ہوئے کہا کہ کیابھارت کا آئین ہمیں بولنے کی اجازت نہیں دیتا، اور وہ جب بولتے ہیں تو پاکستانی کہا جاتا ہے۔ مرکزی حکومت پر الزام عائد کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ یہ آئین ہند کو مسمار کرنا چاہتے ہیں۔انہوں نے کہا’’ اس ملک کا کوئی دوست نہیں،نیپال،بھوٹان،بنگلہ دیش،سری لنکا سب دشمن ہیں،اور اگر ہم یہ کہتے ہیں تو کیا جھوٹ بولتے ہیں،یہ چاہتے ہیں کہ ہم آنکھیں بند کرکے انکا سجدہ کریں،ہم صرف اللہ کے آگے سجدہ کرتے ہیں‘‘۔ وادی کے دورے پر آئے پارلیمانی قائمہ کمیٹیوں کے بارے میں تذکرہ کرتے ہوئے انہوں نے کہا کہ ان کمیٹیوں میں شامل حکومت کے حواری ہیں۔ ڈاکٹر عبداللہ نے کہا’’پارلیمانی کمیٹی چیئرمین نے  ہم سے کہا کہ جو  پارلیمانی کمیٹیاںآئی ہیں وہ حواری ہیں‘‘۔فاروق عبداللہ نے کہا کہ جموں کشمیر میں بے روزگاروں کی تعداد میں اضافہ ہوا ہے اور مقامی نوجوانوں کو تعمیراتی پروجیکٹوں میں نظر انداز کیا جا رہا ہے۔ انہوں نے کہا’’بے کاری کا گراف بڑھا،پڑے لکھے لوگ بیکارہیں،تعمیراتی کاموں کیلئے باہر سے لوگوں کو لایا جاتا ہے، ہمارے نوجوان کیا قابل نہیں ہیں‘‘۔ انہوں نے آپسی اتحاد پر زور دیتے ہوئے کارکنوں سے کہا کہ وہ امتحان کیلئے تیاری کریں اور لوگوں کو مشکلات کے بارے میں مطلع کریں‘‘۔
 
 

کشمیریوں پر دھونس اور دبائو  کی پالیسی جاری: محبوبہ مفتی

سرینگر/بلال فرقانی/ پی ڈی پی صدر محبوبہ مفتی نے کہا کہ حقیقت بیان کرنے والوں کیلئے’پی ایس اے‘ انتظار کر رہا ہے۔ اجلاس سے خطاب کرتے ہوئے محبوبہ مفتی کاکہناتھاکہ یہاں بہت زیادہ دباؤ ہے اور اتحاد سے ہی اس دبائو سے چھٹکارا پایا جاسکتا ہے جو وقت کی ضرورت ہے۔پی ڈی پی صدرنے کہا’’ ہمیں بہت زیادہ دباؤ کا سامنا ہے، آئیے دیکھتے ہیں کہ الیکشن کب لڑے جاتے ہیں لیکن یہ وقت اتحاد کا ہے‘‘۔محبوبہ مفتی نے  اتحاد میں شامل لیڈروں سے مخاطب ہوکر کہاکہ اگر آپ چاہتے ہیں کہ لوگ تمام پریشانیوں سے باہر نکلیں تو آپ کو متحد ہونا پڑے گا، سب کی نظریں ہم پر ہیں۔انہوں نے خبردارکیاکہ الجھن اور غلط فہمی پیدا کرنے کی کوشش کی جا رہی ہے۔ان کا کہنا تھا’’ کئی کارکنوں کو کچھ عناصر نے گمراہ کیا جنہوں نے مجھے فون کیا کہ انہوں نے سنا کہ آج کی’ پی اے جی ڈی‘ میٹنگ منسوخ کر دی گئی ہے۔محبوبہ مفتی نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ بی جے پی والوں کو بغیر کسی پابندی کے ملنے کی اجازت ہے۔ ان کا کہنا تھا حال ہی میں اپنی پارٹی نے بانڈی پورہ میں یوتھ کنونشن کا انعقاد کیا لیکن ہمیں ایک یا دوسرے بہانے سے روکا جا رہا ہے، یہ مکمل بندش ہے اوراس کا حجم بولتا ہے۔انہوں نے کہا کہ جو لوگ دعویٰ کرتے ہیں کہ آرٹیکل 370 واپس نہیں آئے گا، انہیں اللہ تعالیٰ پر یقین نہیں ہے۔ انہوں نے کہا کہ امیدنہیں ہارنی چاہیے۔ محبوبہ مفتی کاکہناتھاکہ آرٹیکل370 نے ہماری زمین اور نوکریوں کو محفوظ بنایا تھا ، لیکن اب بیرونی لوگ چھاپے مار رہے ہیں۔انہوں نے کہا’’ آپ دیکھ سکتے ہیں کہ کس طرح بیرونی لوگوں نے ریت نکالنے کے معاہدوں کو کنٹرول کیا ہے‘‘۔ سابق وزیر اعلیٰ کا کہنا تھا کہ حال ہی میں پلوامہ میں ، پولیس نے بیرونی لوگوں کے مفادات کے تحفظ کیلئے مقامی ریت کے ٹھیکیداروں کے خلاف لاٹھی چارج کیا۔سابق وزیراعلیٰ نے الزام لگایاکہ این ایچ پی سی نے ہمارے وسائل اور بجلی کے منصوبوں کو کیسے لوٹا ہے۔ انہوں نے کہا کہ بی جے پی ایسی پالیسیوں پر عمل پیرا ہے جن کو سمجھنا مشکل ہے۔ محبوبہ کا کہنا تھاایک دن وزیر اعظم کہتے ہیں کہ انہیں کشمیر میں لوگوں کے دل جیتنے ہیں اور دوسرے دن ان کے کچھ لیفٹیننٹ کشمیریوں کو دھمکیاں دیتے ہیں۔ محبوبہ مفتی نے کہا کہ کشمیریوں کو بندوق کی نوک پر خاموش کیا جا رہا ہے۔انہوں نے مزیدکہا’’ کشمیری ششدر ہیں، وہ اظہار نہیں کر سکتے، پی ایس اے سچ بولنے والوں کا انتظار کر رہا ہے،صحافیوں کو ہراساں کیا جا رہا ہے ، گرفتار کیا جا رہا ہے ، پاسپورٹ حاصل کرنے سے محروم کیا جا رہا ہے۔‘‘