گپکار اعلامیہ دھوکہ، دفعہ 370کی واپسی نہیں ہوگی: مادھو

سرینگر // بھارتیہ جنتا پارٹی کے قومی جنرل سکریٹری رام مادھو نے گپکارا علامیہ کو ایک دھوکہ سے تعبیر کیااور دفعہ 370کی تنسیخ کے فیصلے کو واپس لینے کو خارج ازامکان قرار دیا ۔مادھو نے جمعہ کو اپنا تین روز دورہ مکمل کیا اور دہلی واپسی سے قبل پارٹی کارکنوں کو وادی کشمیر میں خالی پنچایتی حلقوں میں انتخابا ت کیلئے تیار رہنے کی تاکید کی ۔مادھو نے کہا کہ گپکار اعلامیہ کشمیر کے بھولے بھالے لوگوں کو بیوقوف بنانے کیلئے ایک کھوکھلا نعرہ ہے۔کشمیر امور کے جنرل سکریٹری وببود گپتا کے مطابق مادھو نے کارکنوں کو بتایا کہ دفعہ 370کی واپسی کا کوئی سوال ہی پیدا نہیں ہوتا اور ہمارا ماننا ہے کہ دفعہ 370ایک رکاوٹ تھی جسے ہم نے دور کیا ۔گپتا کے مطابق مادھو نے کہا کہ کشمیر کے لوگ 370کے ہٹنے سے خوش تھے اور اب بھی خوش ہیں ۔وہ دفعہ 370کی تنسیخ یا لیڈروں کی گرفتاری کے خلاف احتجاج کرنے کیلئے سڑکوں پر نہیں آئے ۔انہوں نے کہا کہ گپکار اعلامیہ لوگوں کو گمراہ کرنے کیلئے ہے تاکہ خود کی اہمیت اجاگر کی جائے۔ ۔مادھو نے کہا کہ کشمیر کے لوگوں نے ہندنوازہ علاقائی سیاسی رہنمائوں کو رد کیا ہے کیونکہ انہوں نے جموں وکشمیر کے لوگوں کو دھوکہ دیا ہے ،بھاجپا کے الطاف ٹھاکر نے بتایا کہ انہوں نے 400پارٹی ورکروں کیلئے تحفظ کا مطالبہ کیا جو وسیم باری کی ہلاکت کے بعد خود کو غیر محفوظ سمجھتے ہیں ۔
 
 

میاں الطاف کا ملنے سے انکار 

نیوز ڈیسک
 
سرینگر//نیشنل کانفرنس سینئر لیڈرمیاں الطاف نے کہاہے کہ انہوں نے بھاجپا کے قومی جنرل سیکریٹری رام مادھو سے ملنے سے انکار کیا ہے۔ایک بیان میں انہوں نے کہا کہ بھاجپاکے مقامی لیڈرخالدجہانگیر نے انہیں جمعہ کو فون پر بتایا کہ رام مادھو اُن سے ملنے اُن کے گھر آنا چاہتے ہیں۔میاں الطاف نے کہا کہ انہوں نے خالدجہانگیر کوبتایا کہ شکریہ ،لیکن میرے گھرآنے کی ضرورت نہیں، کیوں کہ میرابھاجپا کے ساتھ کوئی لینادینا نہیں ہے ۔انہوں نے مزیدکہا کہ میں ان سے کبھی بلواسطہ یابلاواسطہ نہیں ملاہوں اورمیں نے اپنے فون سے انہیں پیغام بھیجاجس میں لکھا ،’’مہربانی کرکے جناب رام مادھو کو بتائے کہ میرے گھرنہ آئیں اورنہ میرے ساتھ کوئی سیاسی بحث کریں،میں نے آپ کو بتایا جب آپ نے مجھے فون کیا‘‘۔بیان میں میاں الطاف نے کہا کہ اب میں اپنے لوگوں کے علاوہ انہیں، جنہوں نے رام مادھو کو مشورہ دیا ہے ، چاہے انکا تعلق سرکار ، بی جے پی یا کسی اور حلقے سے ہواوروہ کوئی ڈرامہ رچاکر مجھے کوئی نقصان پہنچانا چاہتے ہیں، تاکہ بعد میں جنگجوئوں پر الزام عائد کیا جاسکے، لوگوں کو یہ چیزیں سمجھ لینی چاہیے۔