گوہلدکے لوگوں کاپانی کی قلت کیخلاف احتجاجی مظاہرہ

 مینڈھر//مینڈھر کے علاقہ گوہلد کے محلہ شیر والا موہڑہ اور کلراں کے لوگوں نے تحصیل کمپلیکس مینڈھر میں موم بتیاں جلا کر محکمہ صحت عامہ اور انتظامیہ کے خلاف دھرنا دیا۔ اس دوران دھرنے کی قیادت لیبر یونین کے صدر چوہدری عبدالمجید اور یونین کے جنرل سکریٹری مشتاق فانی کررہے تھے۔ انھوں نے کہا کہ گذشتہ کئی مہینوں سے پانی کی شدیدقلت ہے اور محکمہ صحت عامہ کے ملازمین جان بوجھ کر ہمیں پانی نہیں دے رہے ہیں کیونکہ یہ ملازمین علاقہ کے مقامی ہیں اور اپنے اپنے محلوں میں پانی سپلائی کرتے ہیں ۔انھوں نے کہا کہ یہ پانی کی سکیم ڈگری کالج مینڈھر سے ملک پور تک جاتی ہے جہاں سے ہمیں بھی پانی سپلائی کیا جاتا ہے لیکن محکمہ کے ملازمین ملکپور تک ہی پانی سپلائی کرتے ہیں اور اس سے آگے پانی سپلائی جان بوجھ کر نہیں کیا جاتا جس کی وجہ سے لوگوں کو کئی قسم کی مشکلات کا سامنہ کرنا پڑ رہا ہے ۔علاقہ کے لوگوں نے محکمہ کے اعلی افیسران اور متعلقہ وزیر کے خلاف بھی نعرے بازی کرتے ہوئے الزام لگایا کہ متعلقہ وزیر اپنے ملازمین کو کبھی بھی یہ نہیں پوچھتا کہ آپ علاقہ میں کام کرتے ہو یا نہیں ۔انھوں نے کہا کہ متعلقہ وزیر آج تک کبھی بھی مینڈھر میں تشریف نہیں لایا اور اپنے ملازمین کو عام لوگوں کے خیالات سننے کے بعد کبھی یہ نہیں پوچھا کہ آپ تنخواہ لیتے ہو یا پنشن انھوں نے کہا کہ ان ملازمین کو فوری طور علاقہ سے تبدیل کرکے محلے کے لوگوں کو پانی سپلائی کیا جائے کیونکہ یہ دو محلے ایسی جگہ پر واقع ہیں جہاں پر پانی دستیاب نہیں ہے اور لوگوں کو کئی کلو میٹر دور سے پانی پیدل جا کرلانا پڑتا ہے آخر میں ایک یاداشت نامہ ایس ٖڈی ایم مینڈھر کے دفتر میں دیا گیا جس پر دفاتر کے ملازمین نے انھیں یقین دلایا کہ یاداشت نامہ اعلی احکام تک بھیج دیا جائے گا اور متعلقہ ملازمین سے بھی بات کیا جائے گی تاکہ آپ کو پانی سپلائی کیا جائے۔اس دوران وفد میں چوہدری عبدالمجید ،محمد اسد،محمد معصوم، ظفر اقبال وغیر ہ شامل تھے۔