گول کے متعدد دیہات کا نظام زندگی مفلوج

گول// حالیہ برف باری کے بعد جہاں پوری ریاست میں عوام کو کافی مالی نقصانات سے دوچار ہونا پڑا اور شاہراہیں بند ہوئیں وہیں سب ڈویژن گول میں کچھ پنچایتیں ابھی بھی سب ڈویژن گول سے کٹی ہوئی ہیں جس وجہ سے ہزاروں لوگوں کو شدید پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ۔ زیادہ تر یہ سڑکیں پی ایم جی ایس وائی کے تحت آتی ہیں اور حالیہ شدید برف باری کے بعد ابھی تک ان سڑکوں پر برف نہیں اُٹھائی گئی اور لوگ شدید برف میں میلوں سفر پیدل کرنے پر مجبور ہیں ۔ پنچایت ڈھیڈہ کو گول کا آخری گائوں ہے لیکن ابھی تک سڑک پر برف نہیں اُٹھائی گئی ایک دو کلو میٹر جو پی ڈبلیو ڈی کے تحت آتی ہے انہوں نے برف اُٹھائی اور بعد میں پی ایم جی ایس وائی والوں نے یہاں کی طرف دیکھا بھی نہیں ہے ۔ ستم ظریفی یہ ہے کہ محکمہ پی ایم جی ایس وائی اور پی ڈبلیو ڈی کے آفیسران مہینوں سے غائب ہیں اور انتظامیہ بھی آفیسران کی غیر حاضری پر خاموش تماشائی بنی ہوئی ہے جس وجہ سے عام لوگوں کو پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑ تا ہے ۔ پنچایت ڈھیڈہ کے مقامی لوگوں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ حالیہ شدید برف باری کی وجہ سے علاقہ کا واحد سڑک رابطہ بند ہو چکا ہے جس وجہ سے لوگوں کو راشن لے آنے میں کافی پریشانیوں کا سامنا کرنا پڑتا ہے وہیں اگر کوئی بیمار ہو جاتا ہے تو اُسے کاندھوں پر اُٹھا کر ہسپتال تک لے جانا پڑتا ہے ۔مقامی لوگوں نے کہا کہ وارڈ نمبر 3اور2پنچایت ڈھیڈہ میں ٹرانسفارمر نصب جو25KVہے اُس پر150سے زائد گھر ہیں جو قوت برداشت نہیں کر سکتا ہے اور بار بارجلنے کی وجہ سے یہاں بجلی کی سپلائی سے محروم رہنا پڑتا ہے ۔اس طرح کی حالات پنچایت چھچھواہ، سیری پورہ ، مہا کنڈ پنچایتوں کی بھی ہے جہاں کے لوگوں کا کہنا ہے کہ شدید برف باری کے بعد ابھی تک سڑکوں پر برف نہیں اُٹھائی گئی جس وجہ سے لوگوں کو تین تین گھنٹے پیدل سفر کرنا پڑتا ہے اور راشن کو کاندھوں پراُٹھا کر دوردور گائوں تک جانا پڑتا ہے ۔ مقامی لوگوں نے کشمیر عظمیٰ کے ساتھ بات کرتے ہوئے کہا کہ بجلی کی سپلائی بھی شدید برف باری کی وجہ سے متاثر ہو چکی ہے اور سڑکیں برف کی لپیٹ میں ہیں کوئی بھی محکمہ یہاں کی طرف توجہ نہیں دیتا ہے ۔ انہوں نے کہا کہ اتنی شدید پریشانیوں کے با وجود انتظامیہ یہاں پر دکھائی نہیں دے رہی ہے بار بار التجاء کے با وجود انتظامیہ کوئی دھیان نہیں دے رہی ہے ۔تمام پنچایتوں میں شدید برف باری کی وجہ سے باغات کو کافی نقصان پہنچا ہے ، مال میویشی بیمار ہے ، لوگ کافی پریشان ہیں ایسا لگ رہا ہے کہ یہ پنچایتیں اس ریاست کا حصہ نہیں ہیں اور پسِ پشت ڈال دیا گیا ہے ۔