گول میں چوٹی کٹنے کا واقعہ

گول//گول میں آج ایک چوٹی کٹنے کے واقعہ سے سنسنی پھیل گئی ۔ علاقہ کے دتر موڑ میں آج دو بجے کے قریب ایک سترہ سالہ لڑکی منیرہ اختر دختر غلام محمد لوہار کی چوٹی اُس وقت نا معلوم افراد نے کاٹی جب وہ گھر میں موجود تھی ۔ لڑکی کا کہنا ہے کہ وہ باہر جوں ہی نکلی تو دروازے پر دو نوجوان انجان لڑکے کھڑے تھے اور ایک کے ہاتھ میں لفافہ تھا تو مجھے پکڑا رہے تھے اور میں نے لفافہ پکڑنے سے انکار کیا تو اسی دوران دوسرے لڑکے نے میری چوٹی کاٹی اور میں بے ہوش ہو گئی اندر آتے ہی اور بعد کا مجھے کوئی پتہ نہیں۔ گھر میں موجود اس لڑکی دادی کا کہنا ہے مجھے آنکھوںکی بینائی کم ہے جس وجہ سے میں نے کسی کو نہیں دیکھا ۔ جوں ہی گھر کے دوسرے افراد خانہ آئے تو انہوں نے یہ واقعہ دیکھا تو ان میں سنسنی پھیل گئی اور پورے علاقے کے لوگ یہاں امڈ پڑے ۔ وہیں اس موقعہ پر موجود لوگوں کا کہنا ہے کہ دو نامعلوم افراد یہاں کھیتوں سے بھاگے اور مین روڈ پر گئے اور وہاں سے موٹر سائیکل (بلٹ) پر رام بن کی طرف گئے ۔ اس دوران یہاں پر آئے ایس ڈی پی اوگول محمد امین بٹ نے کہا کہ اس طرح کا واقعہ ریاست کے مختلف جگہوں پر ہوئے یہاں تک کہ بیرون ریاست میں بھی چوٹی کٹنے کے واقعات رونما ہوئے لیکن کسی بھی جگہ پر نہیں معلوم ہو سکا کہ کون اس طرح کی واردات انجام دے رہے ہیں ۔ انہوں نے کہا کہ لوگوں کو ہوشیار رہنے کی صلاح دیتے ہوئے کہا کہ اگر اس طرح کا شک و شبہ کسی پر بھی ہے تو پولیس کو اس بارے میں جلد از جلد مطلع کریں تا کہ پولیس اس بارے کارروائی کرے ۔