گورنمنٹ مڈل سکول کنجیالی پٹھانہ تیرکی حالت انتہائی خستہ | 75بچوں کے بیٹھنے کیلئے صرف 2 کمرے

مینڈھر//تعلیمی زون مینڈھر کے گورنمنٹ مڈل سکول کنجیالی پٹھانہ تیر کی حالت نہائت ہی خستہ ہے جس کی وجہ سے بچوں کا مستقبل تاریک ہو تا جارہاہے ۔2کمروں پر مشتمل عمارت میں 8کلاسوںکے 75بچوں کو تعلیم فراہم کی جاتی ہے لیکن سکول انتظامیہ عمارت کی خستہ حالی کی وجہ سے بارشوں میں طلباء کو چھٹی دینے پر مجبور ہو چکے ہیں ۔مقامی لوگوں کے مطابق گورنمنٹ مڈل سکول کنجیالی پٹھانہ تیر1988میں پرائمری سکول بنا تھا جبکہ 2002-03میں مڈل سکول کا درجہ دیا گیا لیکن سرکار نے عمارت کو مڈل سکول کا درجہ نہیں دیا اور بچوں کا مستقبل تباہ ہو رہا ہے۔اس سلسلہ میں پٹھانہ تیر علاقہ سے تعلق رکھنے والے اعجاز کوہلی کا کہنا ہے کہ سرکار کی طرف سے بچوں کو کوئی بھی بنیادی سہولیات سکول کے اندر نہیں دی گئی ہے کیونکہ باتھروم بچوں کے قابل نہیں ہے اور دیوار کے ساتھ اینٹھیں کھڑی کر کے اوپر ٹین ڈال دیا گیا اور بغیر دروازے لگائے کھلا چھوڑ دیا گیا۔انہوں نے کہاکہ غیر معیاری ساز و سامان استعمال کئے جانے کی وجہ سے سیفٹی ٹینک تعمیر کے دوران ہی گر چکا ہے ۔انہوں نے مزید بتایا کہ بچوں کیلئے مڈ ڈے میل کی سہولیت فراہم کرنے کیلئے معقو ل بندو بست نہیں کئے گئے ہیں ۔مقامی لوگوں نے ضلع انتظامیہ پر الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ سکول کی موجودہ عمارت مین بارشوں کے دنوں میں پانی ٹپکتا رہتا ہے جس کی وجہ سے بچوں کے بیٹھنے کیلئے کوئی جگہ ہی نہیں ہوتی ۔پٹھا نہ تیر کے مقامی لوگوں نے ریاستی گورنر انتظامیہ سے اپیل کرتے ہوئے کہاکہ دیہی علا قوں میں تعلیمی نظام کی بہتری کیلئے معقول بندو بست کیا جائے جبکہ عمارتوں کی تعمیر میں لگا ئے گئے غیر معیاری ساز و سامان کے سلسلہ میں انکوائری کروائی جائے ۔انہوں نے کہاکہ گورنمنٹ مڈل سکول کنجیالی پٹھانہ تیرمیں بچوں کو سہولیات فراہم کرنے کیلئے اقدامات اٹھا ئے جائیں ۔ڈپٹی چیف ایجوکیشن آفیسر مینڈھر نے کہا کہ سکول میں ہوئی تعمیر کے دوران استعمال شدہ غیر معیاری ساز و سامان کے سلسلہ میں تحقیقات کروائی جائے گی اور ملوث افراد کیخلاف کارروائی عمل میں لائی جائے گی ۔