گجرات اسمبلی نے گئو کشی ترمیم بل پاس کیا

احمد آباد: یوپی میں غیر قانونی مذبح پر چل رہی کارروائی کے درمیان گجرات اسمبلی نے ایک سخت قانون پاس کیا ہے۔ اس کے تحت گئوکشی ترمیم بل پاس ہو گیا ہے۔ اس نئے قانون کے تحت اب گئوکشی کے قصورواروں کو عمر قید کی سزا کا بھی بندوبست کیا گیا ہے۔ اس نظر ثانی قانون کو اسمبلی سیشن کے آخری دن پاس کیا گیا۔ گجرات جانور تحفظ ایکٹ (1954) کے نظر ثانی قانون کے تحت گایوں کی اسمگلنگ پر 10 سال کی سزا کا قانون بھی ہے۔ اس کے ساتھ ہی شام سات بجے سے صبح پانچ بجے تک ان کو ایک جگہ سے دوسری جگہ پر لے جانے پر بھی پابندی لگا دی گئی ہے۔سال 2011 میں قانون میں جو ترمیم کی گئی تھی ، اس کے مطابق گئوکشی کے قصورواروں کے لئے زیادہ سے زیادہ سات سال کی سزا کا بندوبست کیا گیا تھا۔ اسی قانون میں ترمیم کے تحت عمر قید کا بندوبست کیا گیا ہے۔ نئے قانون میں جرمانے کی رقم کو 50 ہزار سے بڑھا کر دوگنا کر دیا گیا ہے اور اس کے تحت ایک لاکھ سے پانچ لاکھ روپے تک کے جرمانے کی فراہمی نئے قانون میں کیا گیا ہے۔