’ کھوڑی والی ‘درہال آبشار ساحوں کی توجہ کا مرکز بنا

راجوری // ضلع ہیڈ کوراٹر راجوری سے 20کلو میٹر اور درہال تحصیل ہیڈ کوارٹر سے4کلو میٹر کی دوری پر واقعہ ’کھوڑی والی ‘آبشار اس وقت سیاحوں کی توجہ کا مرکزبنا ہوا ہے اور روزانہ سینکڑوں کی تعداد میں ضلع کے مختلف علاقوں سے لوگوں کی ایک بڑی تعداد مذکورہ آبشار کا رخ کرنے کیساتھ ساتھ ٹھنڈے پانی میں نہاتے ہیں ۔مقامی سطح پر مذکورہ جگہ عبداللہ آبشار کے نام سے مشہور ہے جبکہ مذکورہ آبشار خطہ پیر پنچال کی برفانی پہاڑیوں سے نکلنے والے نالے پر موجود ہے جو کہ درہال کے دریا میں مل جاتا ہے ۔مکینوں نے بتایا کہ مذکورہ آبشار کے پانی میں گرمیوں میں بھی کوئی کمی نہیں آتی جبکہ برساتی موسم میں اس کے پانی میں اضافہ ہو جاتا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ دو ماہ قبل تریکنگ پر آئے ہوئے لڑکوں کا ایک گروپ مذکورہ علاقہ میں پہنچا اور آبشار کی ویڈیو اور فوٹو گراف سوشل میڈیا پر وائرل کئے گئے جس کے بعد مذکورہ مقام سیاحوں کی توجہ کا مرکز بن گیا ۔انہوں نے بتایا کہ رواں دنوں میں روزانہ پانچ سو تک سیاح مذکورہ مقام کی جانب رخ کررہے ہیں ۔پردنیوں شرما نامی ایک سیا ح نے کہاکہ مذکورہ مقام پر اسطرح کا آبشار حیرت انگیز ہے ۔انہوں نے بتایا کہ اس طرح کا آبشار پونچھ میں نوری چھم ہے تاہم اس کے نیچے کوئی بھی شخص نہا نہیں سکتا ۔موہن کمار نے بتایا کہ اس مقام موجود سبز درخت آبشار کی خوبصورتی میںمزید اضافہ کر دیتے ہیں ۔محمد عمر مرزا نامی ایک سماجی کارکن نے کہا کہ اگر متعلقہ حکام اس جانب توجہ دیں تو مذکورہ مرکز کو ایک اہم سیاحتی مقام کے طورپر ترقی دی جاسکتی ہے ۔انہوں نے بتایا کہ اس سے قبل مذکورہ علاقہ میں سڑک نہ ہونے کی وجہ سے یہ جگہ نمایاں نہیں تھی تاہم اس یہ مقام سیاحتی مرکز بنتا جا رہا ہے ۔راجوری ڈیولپمنٹ اتھارٹی کے چیف ایگز یکٹو آفیسر وویک پوری نے بتایا کہ ضلع میں کھوڑی والی آبشار ایک اہم سیاحتی مقام کے طور پر سامنے آیا ہے ۔انہوں نے بتایا کہ محکمہ نے مذکورہ مقام پر کچھ کام شروع کئے ہیں جبکہ مزید پروجیکٹ کیلئے بھی سفارشات کی ہیں ۔انہوں نے بتایا کہ اس سلسلہ میں فنڈز کا استعمال بھی کیا گیا ہے تاکہ مذکورہ مقام پر شیڈ ودیگر تعمیرات عمل میںلائی جاسکیں ۔