کوٹرنکہ کے متعدد دیہات میں بجلی نظام خستہ حالی کا شکار

کوٹرنکہ //سب ڈویژن کوٹرنکہ کے اکثر دیہات میں بجلی کی ترسیلی لائنیں لکڑی کے کھمبوں اور سبز درختوں کیساتھ آویزاں ہونے کی وجہ سے عام زندگی متاثرہو رہی ہے ۔صارفین نے محکمہ پی ڈی ڈی اور انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ کروڑوں روپے خرچ کرنے کا نعرہ تو دیا جاتا ہے لیکن دیہات میں بجلی کی سپلائی نظام میں کئی برسوں سے کوئی تبدیلی رونما ہی نہیں ہوئی ۔انہوں نے بتایا کہ بدھل کی گھبر اور کیول پنچایت میں لگ بھگ سبھی ترسیلی لائنوں کو مکمل کرنے کیلئے لکڑی کے کھمبوں اور سبز درختوں کو استعمال کیا گیا ہے جس کی وجہ سے کئی ایک مقامات سے ترسیلی لائنوں کی اونچائی انتہائی کم ہو گئی ہے اور بارشوں کے موسم میں صارفین کی پریشانی میں مزید اضافہ ہو جاتا ہے ۔پنچایتی اراکین نے بتایا کہ گھبر اور کیول گائوں کی بدھل قصبہ سے دوری محض چھ کلو میٹر ہے تاہم اس کے باوجود بھی مذکورہ علاقوں کو بجلی کی سپلائی کیلئے معیاری نظام کیساتھ منسلک نہیں کیا گیا ہے ۔پنچایتی اراکین نے بتایا کہ مرکزی حکومت کی جانب سے آر جی جی وی وائی سکیم جیسی متعدد سکیمیں شروع کی گئی ہیں تاکہ ہر ایک دیہات میں بجلی کی معقول سپلائی فراہم کی جاسکے تاہم کوٹرنکہ کے کئی دیہات میں محکمہ پی ڈی ڈی نے زمینی سطح پر صارفین کو سہولیات ہی نہیں فراہم کیں ۔سرپنچ فاروق انقلابی نے بتایاکہ اس سلسلہ میں کئی بار محکمہ سے بھی رجوع کیا گیالیکن اس کے باوجود عوام کو نظر انداز کیا جارہا ہے ۔مقامی لوگوں و پنچایتی اراکین نے مانگ کرتے ہوئے کہاکہ کوٹرنکہ کے دیہات میں بجلی کی سپلائی کو ٹھیک کیاجائے ۔