کووڈ کے پھیلا ئو کو روکنے کیلئے ماسک و ہاتھ دھونا لازمی قرار | کوٹر نکہ ،پیڑی اور خواص کے 80فیصد سکولوں میں پانی ہی دستیاب نہیں

کوٹرنکہ //کورونا وائرس کی دوسری لہر شروع ہوتے ہی انتظامیہ نے وائرس کے پھیلا ئو کو روکنے کیلئے ماسک کا استعمال کرنے کیساتھ ساتھ ہاتھ دھونے کا لازمی قرار دے دیا ہے جبکہ سرکاری و نجی سکولوں میں زیر تعلیم بچوں کیلئے کووڈ ایس او پیز بالخصوص ماسک کا استعمال اور پانی سے ہاتھ دھونے کو لازمی قرار دے دیا گیا ہے لیکن تعلیمی زون کوٹر نکہ ،پیڑی او ر خواص کے لگ بھگ 80فیصد سرکاری سکولوں میں پینے کے صاف پانی جیسی سہولیات ہی میسری نہیں ہیں ۔مقامی لوگوں نے انتظامیہ کو تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہاکہ کووڈ کو روکنے کیلئے احتیاطی تدابیر اختیار کرنے کی تلقین کی جاتی ہے لیکن دیہات کے اکثر سرکاری سکولوں میں بنیادی سہولیات بالخصوص پینے و استعمال کرنے کیلئے پانی جیسی سہولیات ہی میسر نہیں ہیں جس کی وجہ سے بچوں کو کووڈ ایس او پیز پر عمل کرنے میں مشکلات درپیش ہیں ۔مکینوں نے الزام عائد کرتے ہوئے کہاکہ انتظامیہ سرکاری سکولوں میں بچوں کو بنیادی سہولیات فراہم کر نے میں کوئی دلچسپی ہی ظاہر نہیں کررہی ہے جس کی وجہ سے حالیہ کئی برسوں سے سکولوں میں پانی جیسی بنیادی سہولیت دستیاب نہیں کروائی جاسکی ہے ۔انہوں نے کہاکہ ایک جانب حکومت عوام کو ہاتھ دھونے اور ماسک کا استعمال کرنے کی تلقین کررہی ہے تو دوسری جانب بچوں کو ہی نظر انداز کیا جارہا ہے ۔انہوں نے کہاکہ اس سے قبل ہی کئی مرتبہ اعلیٰ حکام کو سرکاری سکولوں میں بنیادی سہولیات فراہم کرنے کی تلقین کی گئی لیکن کووڈ کے پھیلا ئو کے بعد بھی بچوں کے استعمال کیلئے سرکاری سکولوں میں پانی دستیاب نہیں کیاجاسکا ۔مکینوں نے مانگ کرتے ہو ئے کہاکہ کوٹرنکہ کے سرکاری سکولوں میں پانی جیسی بنیادی سہولیت جلداز جلد میسر کی جائے ۔