کلرکوں کی ہڑتال 17ویں روز میں داخل

سرینگر//تنخواہوں میں تفاوت کے معاملے پر آل جموںاینڈ کشمیر لداخ کلرکل ایسوسی ایشن کی ہڑتال 17ویں روز میں داخل ہوئی اس دوران محکمہ فائنانس کے وزیر سید الطاف بخاری نے ہڑتال پر گئے ملازمین سے اپیل کی ہے وہ آگے آکر مسائل کے حل کی خاطر حکومت کی مدد کریں۔ انہوں نے کہا کہ میں ملازمین کے مطالبات کو سننے کے لیے تیار ہوں اور اُن کے مطالبات پر غور کیا جائے گا لہٰذا وہ عوامی مفاد کو مدنظر رکھ کر اپنے کام پر حاضر ہوجائیں۔کلرکل ایسوسی ایشن تنخواہوں میں تفاوت کو لے کر 16اپریل 2018سے کام چھوڑ ہڑتال پر ہیں۔ ایسو سی ایشن کا مطالبہ ہے کہ حکومت کی یقین دہانیوں کے باوجود بھی ایسوسی ایشن کے مطالبات کو خاطر میں نہیں لایا جارہا ہے۔اس سلسلے میں بدھ کو ضلع بارہمولہ اور بانڈی پورہ میں آل جموںاینڈ کشمیر لداخ کلرکل ایسوسی ایشن سے وابستہ ممبران نے حکومت کے خلاف احتجاج کرتے ہوئے تنخواہوں میں تفاوت کو دور کرنے کا مطالبہ کیا۔انہوں نے کہا کہ اگر چہ کلرکل ایسو سی ایشن کے علاوہ محکمہ پولیس اور پٹواری حضرات کے تنخواہوں میں بھی تفاوت پایا جاتا تھا مگر کچھ مہینے قبل اُن کے مسائل کو حل کیا جاچکا ہے اور آل جموںاینڈ کشمیر لداخ کلرکل ایسوسی ایشن سے وابستہ ملازمین کا مسئلہ ہنوز حل طلب ہے۔ اس دوران محکمہ فائنانس کے وزیر سید الطاف بخاری نے ہڑتال پر گئے ملازمین سے اپیل کی ہے وہ آگے آکر مسائل کے حل کی خاطر حکومت کی مدد کریں۔ انہوں نے ہڑتالی ملازمین کو مشورہ دیتے ہوئے کہا کہ وہ عوامی مفاد کو مدنظر رکھتے ہوئے احتجاج کا راستہ ترک کریں کیوں کہ ریاستی عوام پہلے ہی مختلف مسائل سے جوجھ رہی ہے۔ بخاری نے کہا کہ ’’ملازمین کو چاہیے کہ وہ مسائل کے حل کی خاطر آگے آکر حکومت کی مدد کریں۔ میں ملازمین کے مطالبات کو سننے کے لیے تیار ہوں اور میں بذات خوداس معاملے کو لے کر قائم کی گئی کمیٹی پر نظر رکھوں گا‘‘۔(کے این ایس)