کشمیر میں ریل سروس 7ماہ سے بند | مسافروں کو پریشانی،بحال کرنے کا مطالبہ

سرینگر//کشمیر ریل سروس گزشتہ سات ماہ سے مسلسل بند پڑی ہے جس کے نتیجے میں کشمیر ریلوے کو اب تک کروڑو ں روپے کا خسارہ برداشت کرنا پڑا ہے ۔ اس دوران مسافروں نے مطالبہ کیا ہے کہ ریل سروس کو اب شروع کیا جائے ۔ وادی میںچلنے والی ریل سروس گزشتہ سات ماہ سے مکمل طور ٹھپ ہے ۔ لاک ڈاون کی وجہ سے جہاں تمام کاروباری ادارے اور ٹرانسپورٹ کی سرگرمیاں معطل کی گئیں وہیں ریل سروس کو بھی عارضی طور معطل رکھا گیا ۔ اگرچہ ہندوستان کے دیگر تمام شہروں اور ریاستوں کے درمیان ریل خدمات بحال کی گئیں لیکن بین کشمیر چلنے والی ریل ہنوز بند ہے ۔ ریل خدمات معطل رہنے کے نتیجے میں مسافروں کو شدید دشواریوںکا سامنا کرنا پڑرہا ہے ۔ مسافروں نے اس سلسلے میں کہا ہے کہ ریل میں سفر کرنے سے انہیں کافی سہولت ہوتی تھی۔انہوں نے کہا کہ جہاں پیسے کی بچت ہوتی تھی وہیں وہ اپنی اپنی منزلوں پر وقت پر پہنچتے تھے ۔ بارہمولہ بانہال ریل سروس  سے مستفید ہورہے کچھ مسافروںنے کہا کہ اگرچہ اب لاک ڈائون مکمل طور پر ختم ہوا اور وادی کشمیر کے تمام اضلاع میں ٹرانسپورٹ اور دیگر کاروباری سرگرمیاں بحال ہوئی ہیںتو ریل خدمات کو ہنوز بند رکھنا حیران کن ہے ۔ مسافروں نے کہا کہ جس طرح مسافر بردار گاڑیوں کیلئے رہنما خطوط جاری کئے گئے ہیں اسی طرح ریل سروس کو بھی رہنما خطوط کے تحت شروع کیا جائے تاکہ مسافروں کو راحت نصیب ہو۔سی این آئی