کشمیر میں این آئی اے کے چھاپے، قابل اعتراض دستاویزات ضبط

سری نگر//قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے) نے ہفتے کے روز جموں و کشمیر کے چھ اضلاع میں آٹھ مقامات پرچھاپے مارے۔
 
این آئی اے کے مطابق یہ چھاپے لشکر طیبہ، جیش محمد اور دیگر جنگجو تنظیموں کی طرف سے جموں و کشمیر، دہلی اور دیگر بڑے شہروں میں پر تشدد ملی ٹنٹ کارروائیاں انجام دینے کی منصوبہ بندی اور سازش کے متعلق ایک کیس کے سلسلے میں مارے گئے۔
 
قومی تحقیقاتی ایجسنی کے ایک ترجمان نے اپنے ایک بیان میں کہا کہ آج یعنی 19 فروری کو این آئی اے نے جموں وکشمیر کے سوپور، شوپیاں، کپوارہ، راجوری، بڈگام اور گاندربل میں آٹھ مقامات پر چھاپے مارے اور اس کے علاوہ راجستھان کے ضلع جودھ پورہ میں بھی چھاپہ مارا گیا۔
 
بیان میں کہا گیا کہ یہ چھاپے جنگجو تنظیموں بشمول لشکر طیبہ، جیش محمد،حزب المجاہدین، البدر، ٹی آر ایف کی طرف سے جموں و کشمیر، دہلی اور دیگر بڑے شہروں میں پر تشدد ملی ٹنٹ کارروائیاں انجام دینے کی منصوبہ بندی اور سازش کے متعلق ایک کیس کے سلسلے میں مارے گئے‘۔
 
موصوف ترجمان نے کہا کہ اس کیس کے سلسلے میں این آئی اے نے اب تک 28 افراد کو گرفتار کیا ہے۔
 
انہوں نے کہا کہ ہفتے کے روز مارے گئے چھاپوں کے دوران مختلف قابل اعتراض دستاویزات، ڈیجیٹل ڈیوائسز، سم کارڈس وغیرہ ضبط کئے گئے۔
 
بیان میں کہا گیا کہ اس سلسلے میں مزید تحقیقات شروع کی گئی ہے۔