کشمیر: مہنگائی عروج پر| پرائس کنٹرول کمیٹیاں پوری طرح سے ناکام

نیوز ڈیسک
سری نگر// وادی کشمیر میں جہاں سبزیوں اور پھلوں کی قیمتیں آسمان کو چھونے لگی ہیں وہیں گوشت نہ صرف سب سے زیادہ مہنگا ہوگیا ہے بلکہ قصائیوں کے دکانوں کے بجائے ان کے گھروں میں دستیاب ہونا لگا ہے۔

 

بتادیں کہ اہلیان وادی گوشت کھانے میں اپنی مثال آپ ہیں یہاں امیر ہو یا غریب ہفتے میں کم سے کم ایک بار ضرور گوشت کھاتا ہے۔

 

لوگوں کا کہنا ہے کہ سبزی اور میوہ فرشوں نے گراں بازاری کا بازار گرم کر رکھا ہی ہے لیکن قصائی جس ریٹ پر گوشت فروخت کررہے ہیں وہ مقررہ نرخ نامے سے کافی زیادہ ہے۔

 

ادھر قصائیوں کا کہنا ہے کہ مال کی عدم دستیابی اور حالات کی وجہ سے مہنگائی بھی ہوئی ہے اور گھر میں ہی گوشت بیچنے کی مجبوری بھی ہے۔

 

فیاض احمد نامی ایک شہری نے یو این آئی اردو کو بتایا کہ گوشت نہ صرف کافی مہنگا ملتا ہے بلکہ قصائیوں کے دکانوں کے بجائے ان کے گھروں میں دستیاب ہے۔

 

انہوں نے کہا: ‘میں گوشت خریدنے گھر سے نکلا تو گوشت فروشوں کی دکان بند تھی، پھر میں ایک واقف کار قصائی کے گھر گیا جہاں وہ گوشت بیچ رہا تھا، میں نے جب ریٹ پوچھی تو وہ مقررہ ریٹ سے کافی زیادہ تھی’۔

 

فیاض احمد نے کہا کہ جب میں ریٹ کے بارے میں استفسار کرنے کی کوشش کی تو میرا ساتھ ایسا سلوک کیا گیا جیسے میں مفت مانگ رہا تھا۔

 

ایک شہری نے بتایا کہ یہاں گوشت کہیں چھ سو روپے فی کلو تو کہیں ساڑھے چھ سو روپے فی کلو فروخت کیا جارہا ہے جبکہ اس کی سرکاری ریٹ صرف ساڑھے پانچ سو روپیے فی کلو ہے۔

 

انہوں نے کہا کہ قصائی بھی حالات کو دیکھ کر لوگوں کو لوٹ رہے ہیں کیونکہ یہ لوگ جانتے ہیں کہ کشمیری لوگ گوشت کھانے کے عادی ہیں اور کسی بھی قیمت پر اس کو خریدیں گے۔

 

دریں اثنا قصائیوں کا کہنا ہے مہنگائی کی وجہ سے ہمیں بھی مال مہنگا ملتا ہے جس کی وجہ سے گوشت کی قیمت بڑھ گئی ہے۔