کرناہ کپوارہ شاہراہ کھنڈرات میں تبدیل

سرینگر // کرناہ کپوارہ شاہراہ کھنڈرات میں تبدیل ہوچکی ہے اوربیکن نے علاقے کے لوگوں کو حالات کے رحم وکرم پر چھوڑا ہے ۔کرناہ کپواڑہ شاہراہ کی مرمت اور اُس پر تارکول پچھانے کیلئے ہر سال محکمہ بیکن کیلئے کروڑوں روپے واگزار کئے جاتے ہیں لیکن نستہ چھن گلی سے لیکر ٹیٹوال تک سڑک کی حالت پریشان کن ہے۔نستہ چھن گلی ، ڈنا ، زرلہ ، تار ، مڑ اور کھتوڑہ سڑک کھنڈرات میں تبدیل ہوچکی ہے جبکہ ٹنگڈار مین مارکٹ سے لیکر ٹیٹوال تک سڑک کی حالت بھی انتہائی ناگفتہ بہ ہے ۔مقامی لوگوں نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ بیکن افسران ہر سال لوگوں کو یہ کہتے ہیں کہ سڑک پر سال کے آخر پر کام مکمل ہو گا لیکن اب 2018 بھی اپنے اختتام کو پہنچ رہا ہے لیکن سڑک پر صرف اُس جگہ روڑی ڈالی جا رہی ہے جہاں بہت کم گاڑیوں چلتی ہیں ۔مقامی آبادی کے مطابق جب سے یہ سڑک محکمہ بیکن کے تحت آئی ہے تب سے 50کلو میٹر سڑک نہ ٹھیک ہو سکی اور نہ ہی سڑک کے آس پاس ڈرین اور کلوٹ تعمیر کئے گئے ۔نستہ چھن گلی سے لیکر ٹیٹوال تک سڑک کی خستہ حالی کا اندازہ اس بات سے لگایا جا سکتا ہے کہ سڑک کے کناروں پر موجود دکاندار اگر تین دن دکانیں کھول کر اُن کی صفائی نہیں کریں گے تو پورا سازوسامان تباہ ہو جائے گا اور علاقے کے لوگ مختلف امراض میں مبتلا ہو گئے ہیں ۔سب ضلع ہسپتال ٹنگڈار کے ایک ڈاکٹر نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سڑک سے اٹھنے والے گردغبار پر اگر روک لگانے کی کوشش نہ کی گئی تو آنے والے دنوں میں اُس کے سنگین نتائج برآمد ہوں گے ۔ڈی سی کپواڑہ خالد جہانگیر نے اس حوالے سے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ سڑک پر کام شروع ہو گیا ہے اور آنے والے دنوں میں یہ سڑک ٹھیک ہو جائے گی ۔