کان کنی کے لیز کو معطل کرنے کا معاملہ ضلع افسران کوپہلے متعلقہ حکام سے منظوری حاصل کرنا لازمی

 عظمیٰ نیوز سروس

جموں//ڈائریکٹر ارضیات اور کان کنی، جموں و کشمیر نے تمام ڈسٹرکٹ مائننگ افسران(ڈی ایم اوز)کو ہدایت دی ہے کہ وہ لیز پر حاصل کرنے والوں کی کان کنی کی لیز معطل کرنے سے پہلے اعلی حکام سے پیشگی منظوری لیں۔ڈائریکٹوریٹ نے ایک بیان میں کہا ہے کہ مائننگ لیسیوں، جنہیں ای نیلامی کے عمل میں سب سے زیادہ بولی دینے کی بنیاد پر معمولی معدنیات (RBM/Stone Quarry) بلاکس کی مائننگ لیز دی گئی ہیں، انہیں مخصوص مقدار الاٹ کی جاتی ہے جو سال کے دوران نکالی جائے اور منتقل کی جائے۔یہ دیکھا گیا ہے کہ ڈسٹرکٹ منرل آفیسرز اکثر اس مقصد کے لیے فراہم کردہ پورٹل کے ڈیٹا فیلڈ میں بغیر کسی خود بولی/جائز وجہ/انتظامی آرڈر کو اپ لوڈ کیے مائننگ لیسیوں کو بلاک کرنے کا سہارا لیتے ہیں۔ اس طرح نہ صرف اس طرح کی مائننگ لیز کو بار بار غیر فعال کر دیا جاتا ہے بلکہ اس کے نتیجے میں حکومت کو بھی رائلٹی، جو حکومت کو آپریشنل کان کنی لیز سے حاصل ہوتا ہے، کا نقصان ہوتا ہے۔یہ دیکھا گیا ہے کہ ڈسٹرکٹ منرل آفیسرز ای-مارکیٹ/ای-چالان پورٹل پر رجسٹرڈ مائننگ لیز ہولڈرز کو نامزد نوڈل افسران سے مطلع کیے بغیر احکامات اپ لوڈ کیے بغیر روک رہے ہیں۔اس لیے کوئی بھی ڈسٹرکٹ منرل آفیسر کسی بھی کان کنی لیز ہولڈر کو اپنی سطح پر اس ڈائریکٹوریٹ سے پیشگی منظوری کے بغیر بلاک نہیں کرے گا جو نامزد نوڈل آفیسر(ز) کے ذریعے حاصل کی جائے گی۔ اگر ڈسٹرکٹ مجسٹریٹ متعلقہ ڈسٹرکٹ منرل آفیسر کو کسی بھی قانونی ذمہ داریوں کی تعمیل کرنے میں ناکامی کی وجہ سے پورٹل پر مائننگ لیز کو بلاک کرنے کا حکم دیتا ہے، تو ڈسٹرکٹ منرل آفیسر ایسا کرنے کے بعد ہی ایک خود کلامی آرڈر حاصل کرنے اور اپ لوڈ کرنے کے بعد کرے گا۔