کالعدم تنظیموں کیخلاف کریک ڈائون

اسلام آباد //پاکستانی وزارت داخلہ نے کارروائی کرتے ہوئے مولانا مسعود اظہر کے بھائی حماد اظہر اور اسکے بہنوئی مفتی عبدالرؤف سمیت کالعدم تنظیموں کے 44 افراد کو ’اصلاحی حراست‘ میں لے لیا ۔وزارتِ داخلہ کی جانب سے جاری ہونے والے بیان کے مطابق نیشنل ایکشن پلان کو لاگو کرنے کے حوالے سے وزارتِ داخلہ میں اعلیٰ سطح کا اجلاس منعقد ہوا جس میں کالعدم تنظیموں کے رہنماؤں اور کارکنان کو گرفتار کرنے کا فیصلہ کیا گیا۔بیان میں یہ بتایا گیا کہ قومی سلامتی کمیٹی (این ایس سی) کے اجلاس کے دوران بھی این اے پی کا جائزہ لینے کے بعد یہ فیصلہ لیا گیا تھا کہ کالعدم تنظیموں کے رہنماؤں اور کارکنان کو اصلاحی حراست میں لینے کا سلسلہ جاری رکھا جائے۔میڈیا سے گفتگو کرتے ہوئے سیکریٹری داخلہ سلیمان خان نے  اعتراف کیا کہ جن افراد کو گرفتار کیا گیا ہے ان کے نام پلوامہ حملے پر بھارت کی جانب سے دیے جانے والے ڈوزیئر میں بھی شامل ہیں۔تاہم ان کا اس حوالے سے کہنا تھا کہ ان افراد کی گرفتاری کو ڈوزیئر سے جوڑنا بالکل غلط ہے پریس کانفرنس کے دوران وزیرِ مملکت برائے داخلہ شہریار آفریدی نے کہا کہ کالعدم تنظیموں کے رہنماؤں اور کارکنان کو حراست میں لینے کا فیصلہ پاکستان کا ہے اور یہ کارروائی آئندہ 2 ہفتوں تک جاری رہے گی ۔