کاستی گڑھ، چلی پنگل اسپیریشنل بلاک ڈیولپمنٹ پروگرام کیلئے منتخب

 ڈوڈہ// ڈوڈہ ضلع کے کاستی گڑھ اور چلی پنگل کو اسپیریشنل بلاک ڈیولپمنٹ پروگرام سے فائدہ اٹھانے کے لیے ٹیگ کیا گیا ہے۔ حکومت جموں و کشمیرنے اسپیریشنل بلاک ڈیولپمنٹ پروگرام کو شروع کیا ہے جس کا مقصد یوٹی کے 44 انتہائی پسماندہ بلاکوں کی سماجی و اقتصادی حیثیت میں تیزی سے بہتری کو یقینی بنانا ہے۔ ڈوڈہ ضلع میں، کاستی گڑھ اور چلی پنگل بلاکس کو اے بی ڈی پی کے تحت 21 کارکردگی کے اشاریوں کی بنیاد پر تیار کیا جا رہا ہے جس میں انسانی ترقی کے چار بڑے پہلوؤں یعنی غربت (3انڈیکیٹرس)، صحت اور غذائیت (6 انڈیکٹرس)، تعلیم (7 انڈیکیٹرس) اور بنیادی نیتی آیوگ، حکومتِ ہند کے ساتھ مشاورت سے انفراسٹرکچر (5 انڈیکیٹرس) شامل ہیں۔ ضلع میں پروگرام کو آسانی سے نافذ کرنے کے طریقوں پر تبادلہ خیال کرنے کے لیے، ڈپٹی کمشنر ڈوڈہ وکاس شرما نے یہاں ڈی سی آفس کمپلیکس میں متعلقہ افسران کی میٹنگ کی صدارت کی۔ شروع میں، ڈی سی نے ضلع شماریات اور تشخیص دفتر (ڈی ایس ای او) کو ڈسٹرکٹ نوڈل آفیسر کم کوآرڈینیٹر کے طور پر مقرر کیا، جبکہ اے سی ڈی کو کستی گڑھ کے لیے نوڈل افسر اور ایس ڈی ایم گندوہ کو چلی پنگل بلاک کے لیے نوڈل افسر کے طور پر کاموں اور پروگرام کے نفاذ کے لیے مقرر کیا۔ ڈی سی نے متعلقہ کو ہدایت دی کہ وہ ان بلاکس میں اب تک کی گئی سرگرمیوں کی تفصیلات متعلقہ بلاک سطح کے نوڈل افسروں/بی ڈی اوز کو پیش کریں، تاکہ مستقبل کے لائحہ عمل کے لیے ایک جامع بیس لائن رپورٹ تیار کی جا سکے۔ مزید، ڈی سی نے ڈی ایس ای او کو ہدایت دی کہ وہ اگلے بدھ تک بلاک سطح کے نوڈل افسران کے ساتھ تال میل میں متعلقہ حلقوں سے تمام ضروری معلومات لے کر بیس لائن دستاویز جمع کرائیں۔ انہوں نے کہا کہ ٹھوس اور مطلوبہ نتائج حاصل کرنے کے لیے اے بی ڈی پی ایکشن پلان کی تشکیل کے لیے شناخت شدہ اشاریوں کے حوالے سے بنیادی حقائق پر مبنی پوزیشن کو سمجھنا ناگزیر ہے۔ ڈی سی نے تمام لائن ڈپارٹمنٹس کو ہدایت کی کہ وہ اپنی کوششوں کو پہلے سے شناخت شدہ بنیادی معیارات پر خصوصی توجہ مرکوز کرتے ہوئے ہم آہنگ کریں اور تمام ضروری وسائل کو بروئے کار لاتے ہوئے باقی اہداف کو حاصل کریں۔