ڈاکٹروں کی مبینہ عدم موجودگی سے مریض کی موت راجوری میڈیکل کالج پھرسرخیوں میں ،کارروائی کی یقین دہانی

سمت بھارگو

راجوری//گورنمنٹ میڈیکل کالج راجوری ایک بار پھر مبینہ طور پر طبی لاپرواہی کی وجہ سے خبروں میں ہے ۔راجوری کے تتاپانی گاؤں کے ایک مریض کی بدھ اور جمعرات کی درمیانی رات ہسپتال میں موت ہوگئی اور اس کے اہل خانہ نے ہسپتال کے عملے پر لاپرواہی کے سنگین الزامات لگائے ہیں ۔اہل خانہ کے مطابق متوفی کا نام انکش شرما ولد کلدیپ راج سکنہ تتاپانی کالاکوٹ ہے جو لبلبے کی سوزش کی وجہ سے ہسپتال میں زیر علاج تھا تاہم بدھ اور جمعرات کی درمیانی شب مریض کی حالت بگڑ گئی جس کے بعد انہوں نے ڈیوٹی پر موجود ڈاکٹر سے رابطہ کرنے کی اشد کوشش کی لیکن کوئی ڈاکٹر نہیں ملا اورمریض موت کے منہ میں چلا گیا ۔ان کا مزید کہنا تھا کہ ہسپتال انتظامیہ کی جانب سے ڈاکٹروں کی دستیابی کو یقینی بنانے میں مکمل ناکامی کے باعث مریض کی موت واقع ہوئی ہے ۔

 

لواحقین نے جمعرات کی صبح ہسپتال میں احتجاج شروع کیا اورہسپتال انتظامیہ پر لاپرواہی کا الزام لگاتے ہوئے کارروائی کا مطالبہ کیا۔ابتدائی طور پر اسسٹنٹ کمشنر ریونیو عمران رشید کٹاریہ اور ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر راجوری سچن دیو سنگھ موقع پر پہنچے اور احتجاج کرنے والے کنبہ کے ممبران کی شکایات اور مطالبات سنے اور انہیں کارروائی کا یقین دلایا۔بعد ازاں ڈپٹی کمشنر راجوری وکاس کنڈل جائے وقوعہ پر پہنچے اور مظاہرین کو یقین دلایا کہ مجسٹریٹ انکوائری کمیٹی کے ذریعے پورے معاملے کی مکمل جانچ کی جائے گی۔انہوں نے مزید کہا کہ غفلت برتنے پر ڈاکٹر سمیت ہسپتال کے عملے کے خلاف مقررہ اصولوں کے مطابق کارروائی کی جائے گی۔ڈپٹی کمشنر نے مزید یقین دلایا کہ ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر کو گورنمنٹ میڈیکل کالج میں سپیشل ایڈمنسٹریٹر کے طور پر تعینات کیا جائے گا تاکہ خامیوں اور لاپرواہی کا سنجیدہ نوٹس لیا جاسکے ۔دریں اثنا، ڈپٹی کمشنر راجوری کی طرف سے جاری کردہ ایک حکم میں ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر کو مجسٹریٹ انکوائری کے تحت انکوائری افسر مقرر کیا گیا ہے جو کہ ہسپتال انتظامیہ کی مبینہ لاپرواہی کے باعث مریض کی موت کے اس واقعہ کی تحقیقات کرئے گا ۔اس کے علاوہ جی ایم سیراجوری میں میڈیسن ڈیپارٹمنٹ کے ایک سینئر ڈاکٹر کو معطل کر کے میڈیکل سپرنٹنڈنٹ کے دفتر میں منسلک کر دیا گیا ہے۔اسی طرح ایک جونیئر ریزیڈنٹ ڈاکٹر کو برطرف اور پیرا میڈیکل سٹاف کے ملازمین کو بھی معطل کر دیا گیا ہے۔یہاں یہ بات قابل ذکر ہے کہ گورنمنٹ میڈیکل کالج راجوری میں مبینہ طور پر ڈاکٹروں کی غفلت کے باعث موت کا یہ دوسرا واقعہ ہے کیونکہ چار دن قبل ایک حاملہ خاتون کی موت ہسپتال میں معمول کے مطابق بچے کی پیدائش کے فوراً بعد ہوئی تھی جس کے اہل خانہ نے الزام لگایا تھاکہ ڈاکٹر وں کی لاپرواہی کی وجہ سے مذکورہ واقعہ رونما ہوا ہے ۔