چین سے منسلک شیل کمپنیوں کا ماسٹر مائنڈ گرفتار

نئی دہلی// ہندوستان میں چینی شیل (مکھوٹا) کمپنیوں کے خلاف ایک بڑی کارروائی کرتے ہوئے سیریس فراڈ انویسٹی گیشن آفس (ایس ایف آئی او) نے اہم سازشی اور ریکیٹ کے ماسٹر مائنڈ ڈورٹسے کو گرفتار کر لیا ہے۔ڈورٹسے دہلی این سی آر سے بہار کے ایک دور دراز علاقے میں فرار ہو گیا تھا اور سڑک کے ذریعے ہندوستان سے فرار ہونے کی کوشش کر رہا تھا۔کارپوریٹ امور کی وزارت (ایم سے اے) نے ایک میڈیا ریلیز میں کہا، “فوری طور پر، ایس ایف آئی او میں ایک خصوصی ٹیم تشکیل دی گئی، جسے مذکورہ دور دراز مقام پر تعینات کیا گیا۔ 10 ستمبر 2022 کی شام کو ڈورٹسے کو ایس ایف آئی او نے گرفتار کیا تھا، جسے بعد میں جوڈیشیل کورٹ میں پیش کیا گیا اور اس کے ٹرانزٹ ریمانڈ کے احکامات حاصل کیے گئے۔سرکاری ریلیز میں کہا گیا کہ ڈارٹسے جلیان انڈیا لمیٹڈ کے بورڈ میں ہے اور واضح طور پر ہندوستان میں چینی لنکس والی بڑی تعداد میں شیل کمپنیوں کو حاصل کرنے اور اس کے بورڈ میں جعلی ڈائریکٹر فراہم کرنے کے پورے ریکیٹ کے ماسٹر مائنڈ کے طور پر سامنے آیا ہے۔ایم سی اے نے کہا، “آر او سی (رجسٹرار آف کمپنیز) دہلی کی تحقیقات کے دوران حاصل ہونے والے شواہد اور اس کے ساتھ ہی تلاشی آپریشن واضح طور پر اس بات کی طرف اشارہ کرتے ہیں کہ کئی شیل کمپنیوں میں ڈمی کے طور پر کام کرنے کے لیے جلیان انڈیا لمیٹڈ کے ذریعے ڈمی ڈائریکٹرز کی فراہمی کی جاتی ہے۔”ایم سی اے نے مزید کہا کہ سائٹ سے کمپنی کی سیل اور ڈمی ڈائریکٹرز کے ڈیجیٹل دستخطوں سے بھرے بکس بھی برآمد ہوئے ہیں۔ایم سی اے نے کہا، “ہندوستانی ملازمین ایک چینی انسٹنٹ میسجنگ ایپ کے ذریعے اپنے چینی ہم منصبوں کے ساتھ رابطے میں تھے۔ ہسیز لمیٹڈ کو بھی جلیان انڈیا لمیٹڈ کی جانب سے کام کرتے ہوئے پایا گیا تھا۔ابتدائی ریمارکس بتاتے ہیں کہ ہسیز لمیٹڈ کا جلیان ہانگ کانگ لمیٹڈ کے ساتھ معاہدہ تھا۔ اب تک کی تحقیقات میں ان شیل کمپنیوں کے سنگین مالیاتی جرائم میں ملوث ہونے کا انکشاف ہوا ہے جو ملک کی مالی سلامتی کے لیے نقصان دہ ہیں۔کارپوریٹ امور کی وزارت کی طرف سے 8 ستمبر 2022 کو گڑگاؤں میں جلیان کنسلٹنٹس انڈیا پرائیویٹ لمیٹڈ، بنگلور میں فنیٹی پرائیویٹ لمیٹڈ اور ہسس کنسلٹنگ لمیٹڈ (حیدرآباد میں ایک سابقہ ٓدرج کمپنی) کے دفاتر پر بیک وقت تلاشی اور ضبطی کی کارروائی کے بعد  ایس ایف آئی او نے ڈورٹسے کو گرفتار کر لیا ہے۔رجسٹرار آف کمپنیز کے پاس درج ریکارڈ کے مطابق ڈورٹسے نے اپنی شناخت ہماچل پردیش کے منڈی کے رہنے والے کے طور پر کی تھی۔ایم سی اے، جس کے زیراہتمام ایس ایف آئی او کام کرتا ہے، نے 9 ستمبر 2022 کو جلیان کنسلٹنٹس انڈیا پرائیویٹ لمیٹڈ اور 32 دیگر کمپنیوں کی تحقیقات ایس ایف آئی او کو سونپ دی تھی۔(یو این آئی)