پینے کے پانی کی قلت

 
کپوارہ+بارہمولہ//ولگام کے دیدی کو ٹ علاقہ میں پینے کے پانی کی عدم دستیابی کے نتیجے میں وسیع آبادی پانی کی ایک ایک بوند کے لئے ترس رہی ہے ۔ مقامی شہری الطاف احمد نے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ دیدی کو ٹ علاقہ کو پنجواہ دیدی کو ٹ واٹر سپلائی سکیم سے پانی فراہم ہو تا ہے تاہم گزشتہ کئی مہینو ں سے سکیم سے پانی فراہم کرانے والی پائپو ں میں نقص پیدا ہو گیا ہے اور مختلف مقامات پر یہ پائپیں بند ہو گئی ہیں جس کی وجہ سے پینے کا پانی فراہم نہیں ہو تا ہے ۔مقامی لوگو ں کا کہنا ہے کہ پینے کے پانی کی قلت کے حوالہ سے کئی بار محکمہ پی ایچ ای کے عملے کو آگاہ کیا گیا لیکن وہ انہوں نے کوئی سدباب نہیں کیا ۔انہوں نے مطالبہ کیا کہ لوگوں کو پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کیلئے اقدامات کئے جائیں ۔بارہمولہ کے حاجی بل اور کچہامہ علاقے میں پینے کے صاف پانی کی قلت کی وجہ سے مقامی آبادی آلودہ پانی پینے پر مجبور ہے۔ مقامی لوگوں نے محکمہ پی ایچ ای پر الزام عائد کر تے ہوئے بتا یا کہ محکمہ ہذا کے افسران کی عدم توجہی سے پانی کی سپلائی بُری طرح سے متاثر ہوئی ہے اور لوگ گندہ پانی پینے پر مجبور ہیں۔ ایک مقامی شہری غلام محمدنے کشمیر عظمیٰ کو بتا یا کہ اگر چہ علاقے میں ایک واٹرٹینکی نصب ہے تاہم متعلقہ محکمہ کی غفلت شعاری کی وجہ سے وہ بھی خستہ ہوچکی ہے ۔انہوں نے کہا کہ ٹینکی کے کئی حصوں میں سراخ ہوگئے ہیںاور اُس میں گندہ پانی جمع ہوا ہے۔مقامی لوگوں کا کہنا ہے کہ کئی دیہات میں موجود کئی چشمے بھی سوکھ گئے ہیں جس کے نتیجے میں لوگوں کو دور ایک نالے سے گندہ پانی حاصل کرنا پڑ تا ہے۔انہوں نے بتایا کہ علاقے کے لوگوں نے کئی بار متعلقہ محکمہ کو اس سلسلے میں مطلع کیا تاہم انہوں نے کوئی توجہ نہیں دی۔انہوںنے متعلقہ محکمہ کے اعلیٰ افسران سے مطالبہ کیا کہ علاقے کے لوگوں کو پینے کا صاف پانی فراہم کرنے کیلئے فوری طور قدامات کئے جائیں۔