پینے کے پانی کی عدم دستیابی | بٹ محلہ اورمیر محلہ شاداب کریوہ کے لوگ محکمہ جل شکتی سے نالاں

سرینگر //شاداب کریوہ شوپیاں کے بٹ محلہ اور میر محلہ جل شکتی محکمہ کے خلاف سراپا احتجاج ہیں۔مقامی لوگوں کا الزام ہے کہ محکمہ لوگوں تک پینے کا صاف پانی پہنچانے میں مکمل طور پر ناکام ہو چکا ہے۔ مقامی لوگوں کے ایک وفد نے کشمیر عظمیٰ کو بتایا کہ گذشتہ کئی ماہ سے ان 2محلوں میں پینے کا صاف پانی نایاب ہے اور خواتین کو دور دور سے پانی حاصل کرنا پڑتا ہے۔پانی کی عدم دستیابی کے نتیجے میں نہ صرف عام لوگ پریشان ہیں بلکہ مساجد میں نمازیوں کو بھی سخت دقت پیش آتی ہے۔لوگوں نے بتایا کہ انہوں نے اس تعلق سے کئی بار محکمہ کے اعلیٰ حکام سے رابطہ قائم کیا لیکن یقین دہانیوں کے باوجود بھی ان دو محلوں میں لوگ پانی کی بوند بوند کیلئے ترس رہے ہیں۔انہوں نے کہا کہ ڈی سی شوپیاں اور جل شکتی محکمہ کے چیف انجینئر کو بھی پانی کی قلت سے آگاہ کیا گیالیکن کوئی کارروائی نہیں ہوئی۔وفد میں شامل مشتاق احمد بٹ نامی ایک شہری نے بتایا کہ علاقے میں پانی کی کوئی کمی نہیں ہے البتہ محکمہ کے اہلکارلوگوں تک پانی پہنچانے میں ناکام ہیں۔عاقب شکیل نامی شہری نے کہا کہ ایک طرف جل شکتی محکمہ جل جیون مشن کے تحت ہر گھر تک نل سے پانی فراہم کرنے کا دعویٰ کر رہا ہے وہیں ان دومحلوں کے لوگوں کو آٹو اور لوڈ کیئر کا کرایہ ادا کر کے پانچ کلو میٹردور سے پانی لانے پر مجبور ہونا پڑرہا ہے ۔انہوں نے ضلع انتظامیہ اور محکمہ کے اعلیٰ حکام سے اپیل کی کہ ان دو نوںمحلوں میں پانی کی سپلائی کو بحال کیا جائے ۔