پھول بانی کو آمدن کااہم ذریعہ بنانے کی کوششیں کی جائیں

 جموں//چیف سیکرٹری ڈاکٹر ارون کمار مہتا نے فلوری کلچر ڈیپارٹمنٹ کے کام کاج کا جائزہ لینے کے لئے ایک میٹنگ کی صدارت کی۔میٹنگ میں کمشنر سیکرٹری فلوری کلچر ،گارڈنز اینڈ پارکس ڈیپارٹمنٹ اور محکمہ کے دیگر سینئر اَفسران موجود تھے۔چیف سیکرٹری نے فلوری کلچر ڈیپارٹمنٹ کی ترجیحات کو اَز سر نو ترتیب دینے کی ضرورت پر زور دیتے ہوئے محکمہ سے کہا کہ وہ یونین ٹیریٹری میں مختلف پارکوں اور باغات کی دیکھ ریکھ کے لئے ترقیاتی سرگرمیوں کے علاوہ کمر شل فلوری کلچرکو فروغ دے۔ زراعت اور باغبانی محکموں کی سکیموں اور پروگراموںکی طرز پر اِس شعبے کے لئے مناسب تشہیری سکیمیں متعارف کرنے کے لئے کہا گیا اور کسانوں کی آمدنی میں اِضافے کے لئے محکموں کے درمیان فیلڈ لیول کنورجنس کی راہوں پر بھی غور وخوض ہوا۔ڈاکٹر ارون کمار مہتا نے کہا،’’ محکمہ کو جموں وکشمیر میں پھولوں کی زراعت کو کسانوں کے لئے اگلا بڑا آمدنی کا ذریعہ بنانے کی کوشش کرنی چاہیے۔‘‘ محکمہ کو مزید کہا گیا ہے کہ وہ محکمہ زراعت اور سکاسٹ کے ساتھ مل کر ایک تجویز تیار کرے تاکہ ممکنہ کاشت کاروں کو فلوری کلچر کو بطورِ معاشی سرگرمی اَپنانے کی طرف راغب کیا جاسکے اور اسے 15دِن کے اندر جمع کریں۔چیف سیکرٹری نے باغِ باہو گارڈن میں جاری ترقیاتی سرگرمیوں کا جائزہ لیتے ہوئے گارڈن کی تعمیر کے گیسٹ ہائوس کو میوزیم میں تبدیل کرنے کی ہدایت دی تاکہ سیاحوں کی تعداد میں اِضافہ ہوسکے۔چیف سیکرٹری نے محکمہ سے مزید کہا کہ وہ سونہ مرگ اور گلمرگ میں ٹیو لپ گارڈن کے قیام کے اِمکانات کو تلاش کرے تاکہ جموںوکشمیر یوٹی میں سیاحتی سیزن کو طول دیا جاسکے۔ اِس کے علاوہ جموںوکشمیر کے موسمی حالات کے مطابق دیگر پھولوں کی فصلوں کی نشاندہی کی جائے ۔چیف سیکرٹری نے محکمہ پر زور دیا کہ وہ ہر سیاحتی مقام پر موضوعاتی باغات تیار کرے۔محکمہ سے کہا گیا ہے کہ وہ جموںوکشمیر کی اِقتصادی سرگرمیوں میں اثاثہ جات پر مبنی اور اِسی تناسب کا سٹیڈی کرے۔