پٹھانہ تیر میں احتجاجی دھرناجاری

 
مینڈھر//اگرچہ گزشتہ روز یہ اطلاع ملی تھی کہ پٹھانہ تیر کے لوگوںنے سکول کادرجہ بڑھانے کے مطالبے پر اپنا احتجاج انتظامیہ کی یقین دہانی پر کچھ عرصہ کیلئے ملتوی کردیاہے تاہم انہوںنے یہ احتجاجی دھرنا جاری رکھاہواہے ۔مقامی لوگوں نے اتوار کو ساتویں روز بھی اپنا دھرنا جاری رکھااور حکومت سے مانگ کی کہ ہائی سکول پٹھانہ تیر کادرجہ بڑھاکر اسے ہائرسکینڈری سکول بنایاجائے ۔دھرنے پر بیٹھے لوگوں نے ایم ایل اے مینڈھر ،وزیرتعلیم اور حکومت کے خلاف نعرے بازی کرتے ہوئے کہاکہ ان کے ساتھ جان بوجھ کر ناانصافی کی گئی ہے ۔احتجاج کو دیکھتے ہوئے نیشنل کانفرنس لیڈران نے اپنا ایک وفد بھی پٹھانہ تیر بھیجا جس نے مظاہرین کے ساتھ بات چیت کرکے انہیں یقین دلایا کہ سکول کادرجہ بڑھایاجائے گااور وہ یہاں ایم ایل اے کی ہدایت پر آئے ہیںتاہم انہوںنے احتجاج ختم کرنے سے منع کرتے ہوئے کہاکہ وہ تبھی دھرنا ختم کریںگے جب ممبراسمبلی خود یہاں آکر سکول کادرجہ بڑھانے کا اعلان کریں۔انہوںنے کہاکہ اس طرح سے طفل تسلیوںپر وہ احتجاج ختم نہیں کریںگے ۔انہوںنے کہاکہ یہ ایک پہاڑی علاقہ ہے جہاں کے طلباء کو دسویں کے بعد کی تعلیم کیلئے مشکلات کاسامناکرناپڑتاہے اس لئے سکول کادرجہ بڑھاکر اسے ہائراسکینڈری کیاجائے جو ان کی جائز مانگ ہے ۔انہوںنے حکومت سے اپیل کی کہ وہ ایک ٹیم بھیج کر خود جائزہ لے کہ کیا پٹھانہ تیر علاقہ ہائراسکینڈری سکول درجہ کا حقدار ہے یا نہیں جس کے بعد انہیں کوئی اعتراض نہ ہوگا۔مظاہرین کاکہناتھاکہ ہائرسکینڈری سکول نہ ہونے کی وجہ سے طالبات ترک تعلیم پر مجبور ہوتی ہیں۔