’پونچھ میں رہناہے تو رام رام کہناہے‘

پونچھ//سرحدی ضلع پونچھ میں بڈھا امر ناتھ یاترا شروع ہونے سے قبل ایسے پوسٹر چسپاں کئے گئے ہیں جن کے ذریعہ اہالیان پونچھ سے کہاگیاہے کہ اگر انہیں یہاں رہناہے تو پھر رام رام کہناپڑے گا۔ان پوسٹروں کو دیکھنے کے بعد پونچھ کے مسلم طبقہ میں زبردست غم و غصہ پایاجارہاہے اور اس نے انتظامیہ و پولیس سے شرپسند عناصر کے خلاف کارروائی کرنے کا مطالبہ کیاہے ۔ شہر کے اعلیٰ پیرعلاقے میں رومن انگریزی زبان میں کسی نے پوسٹر چسپاں کئے ہوئے ہیں جن میں مسلمانوں کو صاف صاف کہا گیا ہے کہ اگر انکو پونچھ میں رہنا ہے تو رام رام کہنا پڑے گا۔ان پوسٹروں میں تحریر ہے کہ ’’بھارت ماتا کی جے، پونچھ کے مسلمانو ایک بات کان کھول کر سن لو اگر پونچھ میں رہنا ہے تورام رام کہنا ہے، ہمارے یاتری شہید ہوئے اور آپ لوگوں نے دوکانیں کھلی رکھیں ، پونچھ سے پاکستان چلے جائو نہیں تو جس طرح کشمیری مارے جا رہے ہیں ،اسی طرح تم بھی مارے جائو گے ،بم بم بولے‘‘۔یہ پوسٹر نظر آتے ہی پونچھ میں ایک نئی بحث شروع ہوگئی ہے اور سوشل میڈیا پر بھی تبصرے ہورہے ہیں۔وہیںکانگریس کے سینئر لیڈڑ تاج میر نے کہا کہ پونچھ کے ہندو اور مسلم امن پسند ہیں،یہ شر پسند عناصر کی ناکام کوشش ہے جو پونچھ کے پر امن ماحول کو خراب کرنا چاہتے ہیں۔ انہوں نے تمام مسلمانوں سے صبر و تحمل کی اپیل کی۔ایڈووکیٹ محمد زمان نے افسوس کا اظہار کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس طرح کے لوگوں کے خلاف سخت سے سخت کارروائی کرنی چاہئے۔ ایس ایس پی پونچھ راجیو پانڈے نے رابطہ کرنے پر بتایاکہ اس سلسلے میں کیس درج کرکے مزید تحقیقات شروع کردی گئی ہے او ربہت جلد ایسے لوگوں کا پتہ لگالیاجائے گا جو جنہوںنے حالات خراب کرنے کی کوشش کی ہے ۔