پلوامہ ،شوپیان اور کولگام میں پولیس کی جانب سے ماسک تقسیم

پلوامہ// ضلع پلوامہ میں پولیس نے لوگوں میں فیس ماسک تقسیم کرتے ہوئے عوام سے اپیل کی کہ وہ احتیاطی تدابیر پر عمل کریں۔پولیس نے  کئی جگہوں پر شہریوں اور ٹرانسپورٹروں میں کورونا وائرس سے بچنے کیلئے فیس ماسک تقسیم کئے۔پولیس نے ضلع اسپتال ،مین قصبہ، کاکہ پورہ،راجپورہ،لیتراور لاسی پورہ کے علاوہ دیگر مقامات پر لوگوں میں مفت فیس ماسک تقسیم کرتے ہوئے لوگوں سے اپیل کی کہ وہکووڈ رہنما خطوط پر عمل کرکے صحت و صفائی کا خاص خیال رکھیں ۔ کووڈ 19 کے پھیلاؤ کو روکنے اور کمیونٹی کے ممبروں کو سی اے بی کے بارے میں بیدار کرنے کے لئے، کولگام میں پولیس نے عام لوگوں میں چہرے کے ماسک تقسیم کئے۔ایس ایس پی کولگام ڈاکٹرجی وی سندیپ کی ہدایت پر ضلع کے عام لوگوں میں وبائی بیماری کوویڈ 19 کے بارے میں بیداری پیدا کرنے کے لیے ایک بڑے پیمانے پر مہم چلائی گئی۔یہ مہم جی ڈی سی کولگام سے شروع کی گئی اور کولگام، مین بازار کولگام کی لنک روڈز سے ہوتی ہوئی قاضی گنڈ تک مارچ کیا گیا جس میں ڈی وائی ایس پی ہیڈکوارٹر کولگام کے ساتھ ایس ایچ او پی ایس کولگام سمیت متعدد افسران و اہلکاروں نے شرکت کی۔مہم کے دوران عام لوگوں میں فیس ماسک اور سینی ٹائزر تقسیم کیے گئے۔ عام لوگوں کو یہ بھی مشورہ دیا گیا کہ وہ ویکسین لگوائیں اور سوشل میڈیا پر شرپسندوں کی طرف سے یہ ویکسین نہ لینے کی افواہوں پر دھیان نہ دیں کیونکہ یہ نقصان دہ ہو سکتا ہے۔ شوپیان پولیس نے قصبہ میں ماسک تقسیم کیے اور بتایا کہ کورونا وائرس کی تیسری لہر پر قابو پانے کے لیے ہر ایک شخص کو محتاط رہنے کی ضرورت ہے۔ایس ایس پی شوپیان امرت پال سنگھ کی ہدایت پر قصبہ شوپیان میں اے ایس پی شوپیان افروز احمدکی سربراہی اور ایس ایچ او شوپیان مدثر احمد اور ڈی وائی ایس پی ڈار شیزان کی نگرانی میں ٹرانسپورٹروں، طلباء اور باقی شہریوں میں کورونا وائرس سے بچنے کے لئے سیفٹی ماسک اور سینی ٹائزر تقسیم کئے اور شہریوں کو ہدایت کی کہ وہ کورونا وباء سے بچنے کے لئے ماسک کا استعمال کریں تاکہ اس وباء پر قابو پایا جا سکے۔اس دوران ضلع انتظامیہ شوپیان کے ایڈیشنل ڈپٹی کمشنر مشتاق احمد سمنانی، سیکریٹری میونسپل کونسل شوپیان اسداللہ اور دیگر افسران بھی موجود تھے جنہوں نے لوگوں میں ماسک تقسیم کیے اور کووڈ سے بچنے کے لیے جانکاری دی۔ اس دوران ایڈشنل ڈپٹی کمشنر شوپیان مشتاق احمد سمنانی نے بتایا کہ ہر اضلاع میں ضلع انتظامیہ اور پولیس کو پہلے ہی متحرک کیا گیا ہے اور عام لوگ بھی برابر تعاون دے رہے ہیں۔