پرنسپل ڈگری کالج ڈوڈہ کی ذرائع ابلاغ کے کیساتھ تعارفی میٹنگ

ڈوڈہ//حال ہی میں پرنسپل ڈگری کالج ڈوڈہ کا چارج سنبھالنے والے پروفیسر ڈاکٹر شفقت حسین رفیقی نے ذرائع ابلاغ کے نمائندو ںکے ساتھ ایک تعارفی میٹنگ کا انعقاد کیا جس میں مختلف اخبارات ،نیو زایجنسیز اور ٹی وی چینلوں سے وابستہ صحافیوں اور کالج کے تدریسی عملہ کے اراکین نے شرکت کر کے آپسی تبادلۂ خیالات عمل میں لایا۔اس موقع پر مختلف مقررین نے اپنے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے ڈاکٹر شفقت حسین رفیقی کے بطور پرنسپل ڈگری کالج ڈوڈہ تعیناتی کا خیر مقدم کیا،اُنہیں خوش آمدیدکہااور اُمید ظاہر کی کہ موصوف اپنی قابلیت اور خدا داد صلاحیتوں سے کالج کو نئی بلندیوں تک لے جائیں گے۔ افتتاحی کلمات میںپروفیسرڈاکٹر اختر سہیل نے شرکائے میٹنگ کو خوش آمدید کہا اور میٹنگ کے اغراض و مقاصد بیان کئے۔بعدہٗ مختلف مقررین نے کالج کے مسائل کو اُجاگر کیااور ان مسائل کے ازالہ اور کالج کی ترقی کے لئے  کچھ مفید مشورے بھی پیش کئے ۔ پرنسپل موصوف نے اپنے خطاب میں میٹنگ میں شرکت کرنے والے صحافیوں کا شکریہ ادا کیا اور یقین دلایا کہ وہ کالج کے تعلیمی معیار اور نظم و ضبط کو بہتر بنانے کی ہر ممکن کوشش کریں گے اور جو توقعات اُن کے ساتھ وابستہ کی گئی ہیں اُن پر پورا اُترنے کی کوشش کریں گے۔اُنہوں نے کہا کہ وہ کرسی پر بیٹھ کر احکامات جاری کرنے کی بجائے عملی طور کام کرنے میں یقین رکھتے ہیں اور اپنے ماتحت عملہ سے یہی کچھ چاہتے ہیں۔وہ تعلیمی کام میں کسی قسم کی سستی اور سہل انگاری برداشت نہیں کریں گے،خود بھی ڈیوٹی کے پابند رہیں گے اور کالج میں تعینات عملہ کو بھی اس کا پابند بنائیں گے۔اُنہوں نے کہا کہ وہ کالج میں زیرِ تعلیم طلباء و طالبات کی بہتری کے لئے ہر وہ قدم اُٹھائیں گے جو ممکن ہو اور اُن کی خواہش ہے کہ اس کالج سے ایسے تعلیم یافتہ نوجوان تیار ہوں جو ہمارے لئے سرمایۂ افتخار ثابت ہوں۔اُنہوں نے کہاکہ کالج میں کلاس رومز اور دیگر مقاصد کے لئے استعمال ہونے والے کمروں کی شدید قلت پائی جاتی ہے جس وجہ سے کالج کا نظام چلانے میں مشکلات کا پیش آنا لازمی ہے۔ صحافیوں سے اُن کا تعاون طلب کرتے ہوئے پرنسپل موصوف نے کہا کہ موجودہ دور میں میڈیا تیسری آنکھ کی حیثیت رکھتا ہے اور میڈیا کے کردار کو کسی بھی صورت میں فراموش نہیں کیا جا سکتا۔ تعلیم اور صحافت ایک دوسرے کے لئے لازم و ملزوم ہیں اور ہم سب کا مقصد ایک ہے۔ اگر ہم ایک دوسرے کا تعاون کرتے ہوئے مربوط انداز میں کام کریں تو یقیناً ہم اپنے مقصد میں کامیاب ہو جائیں گے۔اُنہوں نے کہا کہ کالج کے لئے مزید زمین حاصل کرنا بھی وقت کی اہم ضرورت ہے جس کے لئے ہم سب مل جل کر کوشش کرنا ہو گی۔ میٹنگ میں موجود صحافیوں نے پرنسپل موصوف کو اپنے بھر پور تعاون کا یقین دلایا ۔ اُنہوںنے کہا کہ ڈوڈہ کی صحافتی برادری اور سول سوسائٹی کالج سے متصل گوجر ہوسٹل برائے طلباء کو کسی دوسری جگہ منتقل کرنے اور اُس کی عمارت اور اراضی کو کالج کے لئے حاصل کرنے کے لئے جدوجہد کریں گے۔اُنہوں نے کہا کہ وہ اس معاملہ کو مقامی ایم ایل اے اور متعلقہ وزراء کی نوٹس میں لائیں گے اور اُن سے اپیل کریں گے کہ گوجر ہوسٹل کو کسی اور جگہ منتقل کر کے اُس کی عمارت اور اراضی کالج کے قبضہ میں دیا جائے تاکہ اُس کی عمارت کو کالج ہوسٹل اور اراضی کو دیگر تعمیرات کے لئے استعمال کیا جا سکے۔شرکائے میٹنگ نے کالج کے گیٹ کے سامنے گندگی کے ڈھیر جمع ہونے اور کالج لنک روڈ کو پارکنگ کے لئے استعمال کرنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے متعلقہ حکام پر زور دیا کہ گندگی کے ڈھیروں کو فوری طور ہٹایا جانا چاہیے اور کالج لنک روڈ پر گاڑی پارک کرنے پا پابندی عائد کی جانی چاہیے۔پروگرام کے آخر پر ڈاکٹر امتیاز احمد زرگر نے شکریہ کی تحریک پیش کی۔میٹنگ کے دوران ڈاکٹر جاوید اقبال ترمبو،ڈاکٹر جمشید ،ڈاکٹر اعجاز احمد پروفیسر بابو رام، اشتیاق احمد دیو،نصیر احمد کھوڑا اور سید ریاض احمد نے اپنے اپنے خیالات کا اظہار کیا۔اس موقع پر سعداللہ رنگریز،محمد اصغر بٹ،عابد پانپوری،عابد وانی اور ارپن کمار بھی موجود تھے۔