پرنسپل سیکرٹری نوین چودھری نے کٹھوعہ کا تفصیلی دورہ کیا | زیرولائن ہیر ا نگر پرگندم کی سرحدی بوائی کا معائینہ ،کٹھوعہ میں زرعی مصنوعات کی سیل آئوٹ لٹ کا اِفتتاح کیا

کٹھوعہ//پرنسپل سیکرٹری زرعی پیداوار اور بہبود کساناں محکمہ نوین کمار چودھری نے آج یہاں زراعت اور متعلقہ محکموں کی طرف سے شروع کی جارہی زمینی سرگرمیوں کا معائینہ کرنے کے لئے کٹھوعہ ضلع کا تفصیلی دورہ کیا۔پرنسپل سیکرٹری نے ہیرا نگر سیکٹر میں 150 ایکڑ اراضی پر سرحدی گندم کی بوائی کا معائینہ کرتے ہوئے کہا کہ اِس علاقے کے کسان سرحد پار فائرنگ کی وجہ سے ہیر ا نگر سیکٹر میں فارورڈ لائن ہند و پاک سرحد کے ساتھ اَپنی بڑی ایکڑ اراضی کو غیر کاشت سے بچاتے تھے۔اُنہوں نے مزید کہا کہ اِس برس حکومتی پالیسی کی وجہ سے محکمہ زراعت ، سول اِنتظامیہ ، سیکورٹی فورسز ( بی ایس ایف ) نے اِس سلسلے میں پیش رفت حاصل کرنے کے لئے اِجتماعی کوششوں کا ایک سلسلہ شروع کیا ہے۔نتیجتاً کاشت کار برداری آگے آئی اور 19 برس کے عرصے کے طویل مدت کے بعد زیر و لائن پر ربیع 2021-22 کے دوران گندم کی بوائی کا عمل شروع کیا گیا۔یہ بات واضح ہے کہ کاشت کاروں کو بیج ، کھاد اور ٹریکٹر کی اِضافی اِمداد بھی فراہم کی گئی اور سرحدی دیہات چندواں ، چک چھانگا اور لنڈی کے کسانوں پر مشتمل 150 ایکڑ سرحدی اراضی پر گند کی کاشت مکمل کی گئی۔دورے کے دوران پرنسپل سیکرٹر ی نے کسانوں سے بھی بات چیت کی جنہوں نے حکومت کے اِس اقدام پر خوشی اور اطمینان کا اِظہار کیا جس نے انہیں طویل مدت کے بعد اَپنی زمینوں پر کاشت کرنے کے قابل بنایا۔اُنہوں نے مزید کہا ،’’ ہم اگلے فصل کے سیزن تک زیرو لائن پر فیصل بندی سے باہر پڑنے والے پورے علاقے کا اَحاطہ کرنے کے منتظر ہیں اور کاشت کاروں کو ترجیحی بنیادوں پر زرعی مشینری اور دیگر آلات کشاوزی کی فراہمی سمیت تمام مدد فراہم کی جائے گی۔‘‘اِس سے قبل پرنسپل سیکرٹری نے جنڈی کالونی میں مشروم شیڈ کا اِفتتاح کیا اور خواتین سیلف ہیلپ گروپوں کے اَرکان کے ساتھ اِستفسار کیا ۔ اُنہوں نے وومن ایف پی او کی جانب سے کی جانے والی سرگرمیوں کا بھی معائینہ کیا جہاں انہیں جانکاری دی گئی کہ ایف پی او 233 خواتین پر مشتمل ہے جس میں 9دیہات شامل ہیں اور بنیادی طور پر مشروم کی کاشت اور آرگنک فارمنگ میں شامل ہیں۔مزید برآں ، اُنہوں نے ہری پور میں اسٹرابیری فارم، راج باغ میں شیپ فارم کا معائینہ کیا۔دریں اثناء ، چیف ایگریکلچر آفس کٹھوعہ میں قائم ایگری پروڈکٹس سیل سینٹر کا اِفتتاح کرتے ہوئے پرنسپل سیکرٹری نے کہا کہ 279 نیوٹریشنل ایس ایچ جیز ( ہر پنچایت میں ایک ) کو اِس سیل سینٹر سے منسلک کیا جائے گا جو انہیں اَپنی مصنوعات کی براہِ راست فروخت کے لئے ایک پلیٹ فارم فراہم کرے گا۔ انہوں نے زور دے کر کہا کہ وقت کی ضرورت ہے کہ ایسے مراکز کی بنیاد کو وسیع کیا جائے تاکہ صارفین کو مناسب قیمت پر صحیح مصنوعات فراہم کی جاسکیں۔انہوں نے اس قسم کے مزید سیل آؤٹ لیٹس قائم کرنے کے لئے کہا تاکہ کسانوں کو بہتر منافع ملے اور صارفین ان کی دہلیز پر تازہ اور معیاری سبزیوں سے لطف اندوز ہو سکیں۔