پردیپ شرماکا بیان قابل مذمت

راجوری//بھاجپا کے پونچھ سے ممبرقانون ساز کونسل پردیپ شرما کے بیان کی مذمت کرتے ہوئے راجوری کے نوجوانوںنے ایمپلائمنٹ اور لیگل میٹرولوجی دفاتر کو قصبہ کے نزدیک تعمیر کرنے کی مانگ کی جنہیں کئی کلو میٹر دور بنایاجارہاہے ۔راجوری میں ایک پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے مقامی نوجوانوں نے کہاکہ گزشتہ روز ایم ایل سی پردیب شرما نے اپنے بیان میں کہاتھا کہ جو مسلمان بھاجپا کو اپنا ووٹ نہیں دے گا ،اسے یہاں رہنے کا حق نہیں ۔انہوںنے کہاکہ ایسے بیانات قابل مذمت ہیں اوران سے ہندوستان میں آپسی بھائے چارے کو نقصان پہنچ سکتاہے ۔انہوںنے کہاکہ بھاجپا کا مقصد ہی بھائی چارے کی فضا کو نقصان پہنچاناہے۔ان کاکہناتھا کہ مسلمانوں کے خلاف پورے ملک میں طرح طرح کی سازشیں کی جارہی ہیں جو ملک کی سالمیت کے لئے بڑا خطرہ ثابت ہوسکتی ہیں ۔ انہوں نے مزید کہا کہ اگر اس طرح کی بیان بازی پر ریاستی سرکار نے روک نہیں لگائی تو اس کے نتائج سنگین برآمد ہونگے ۔ ان کاکہناتھاکہ خطہ پیر پنجال میں آپسی بھائے چارے کی مثال قائم ہے لیکن کچھ شرپسند عناصر اس امن اور آپسی رواداری کوبرداشت نہیں کررہے کیونکہ ان کی سیاست اسی ذہنیت پر چلتی ہے ۔ نوجوانوں نے مزیدکہاکہ ممبراسمبلی راجوری اور ممبر قانون ساز کونسل دونوں غفلت کی نیند سورہے ہیں اور ایمپلائمنٹ و کونسلنگ سنٹر و لیگل میٹرولوجی دفاتر کو ضلع صدر مقام سے کئی کلو میٹر دور تعمیر کیاجارہاہے ۔انہوںنے کہاکہ پہلے میڈیکل کالج کو قصبہ سے دور منتقل کیاگیااور اب ان دفاتر کو بھی وہیں لیجایاجارہاہے جس سے مجموعی طور پر لوگوں کو فائدہ کے بجائے الٹانقصان ہوگا۔انہوںنے کہاکہ ایم ایل اے اور ایم ایل سی مجرمانہ خاموشی کوتوڑیں اور اگر فیصلہ واپس نہیں لیاگیاتو وہ احتجاج کی راہ اختیار کریںگے۔