پردہ اسلام اور کشمیری تہذیب کا حصہ:لشکر طیبہ

سرینگر// چیف لشکر طیبہ جموں کشمیر محمودشاہ نے اینسلری  میڈیکل ٹریننگ انسٹی ٹیوٹ کی پرنسپل کی جانب سے جاری کردہ پردہ مخالف بیان کی شدید الفاظ میں مذمت کرتے ہوئے کہاہے کہ پردہ مسلمان عورتوں کے لیے لازمی قراردیاگیاہے ۔کوئی بھی فرد ایک دنیا وی مقصد کے لیے اسلامی شعار کو تبدیل نہیں کرسکتیں ۔اسلام نے جس کام سے منع کیا ہے اور جس کا کرنے کا حکم دیا ہے دونوں میں خیر ہے ۔آج دنیا اس بات کو تسلیم کرتی ہے کہ پردہ دار خواتین معاشرے میں زیادہ محفوظ اور باعزت سمجھی جاتی ہیں ۔اسلام عورت کو اپنی زیب و زینت چھپانے کا حکم دیتا ہے۔ دنیا کا کوئی بھی کام اسلام کے سے بڑھ کر نہیں ہوسکتا ہے اور نہ ہی اس کی اجازت دی جاسکتی ہے ۔پردہ سب سے پہلے اسلام اور پھر کشمیری تہذیب کا اہم حصہ ہے ۔جہاں تک انفیکشن کی بات ہے تو باپردہ اور ڈھکا ہواجسم ہر قسم کے مضر اثرات سے محفوظ رہتا ہے ورنہ سرجن حضرات آپریشن کے وقت منہ ،سراور باقی جسم پر عبایہ نما کپڑے زیب تن نہ کرتے ۔انہوںنے کہاکہ علمائے کرام اس معاملے میں اپنا کرداراداکریں ۔