پرانے ضلع ڈوڈہ کے عوام تفریق پسند قوتوں کو شکست دیں

 رام بن //بی جے پی اور کانگریس پر فرقہ وارانہ بنیادوں پر ووٹوں کی تقسیم کا الزام عائد کرتے ہوئے پنتھرز پارٹی کے چیئرمین و اودھمپور ۔ ڈوڈہ پارلیمانی حلقہ سے پارٹی کے امیدوار ہرش دیوسنگھ نے کہاکہ پرانے ضلع ڈوڈہ کے لوگ تفریق پسند قوتوں کو شکست دے کر ان کے عزائم کو ناکام بنائیں ۔رام بن ، ٹنگر، چندرکوٹ، گاندھری ، کبی و دیگر علاقوں میں انتخابی جلسوں سے خطاب کرتے ہوئے ہرش دیو سنگھ نے کہاکہ فرقہ وارانہ ہم آہنگی اور بھائی چارہ ریاست کی تاریخی روایت ہے جسے نقصان پہنچانے کی ہرگز اجازت نہیں دی جائے گی ۔ کشتواڑ میں آر ایس ایس لیڈر کی ہلاکت کے واقعہ کی مذمت کرتے ہوئے انہوںنے کہاکہ پچھلے چھ ماہ کے دوران یہ دوسرا ایسا واقعہ ہے اور اس سے پہلے پریہار برادران کو بھی ایسے ہی ہلاک کردیاگیا۔ انہوںنے کہاکہ عوام میں ایسے خدشات پائے جارہے ہیں کہ الیکشن کے دوران سیاسی ورکر کی ہلاکت سیاسی مقاصد کیلئے ہوسکتی ہے لہٰذا اس معاملے کی اعلیٰ سطح پر انکوائری کروائی جائے اور کشتواڑ میں امن کو نقصان پہنچانے کی کوششیں کرنے والوں کو انصاف کے کٹہرے میں کھڑا کیاجائے ۔انہوںنے بھاجپا اور کانگریس کو خبر دار کرتے ہوئے کہاکہ وہ عوام کے صبر کا امتحان نہ لیں اور اپنے ووٹ بنک کی طرح سماج میں تفریق اور خلیج پیدا نہ کریں ۔ انہوںنے کہاکہ اس سے پہلے ہی اس طرح کی کوششوں سے سماج کو کافی نقصان پہنچ چکاہے اور قومی سیاسی جماعتوںکو اپنے حقیر سیاسی مفادات کی خاطر لوگوں کو آپس میں بانٹنا نہیں چاہئے ۔پرانے ضلع ڈوڈہ میں انٹرنیٹ خدمات کی معطلی پر برہمی کا اظہار کرتے ہوئے ہرش دیو سنگھ نے کہاکہ علاقے میں امن بحالی کے بجائے حکومت صورتحال کو مزید خراب کرنے کے اقدامات کررہی ہے۔انہوںنے کہاکہ انتخابات کے دوران ترسیلی روابط کو مسدود کرنا جمہوریت کے منافی اقدام ہے جس سے صرف اور صرف خوف کا ماحول پید اہوگا۔پنتھرز لیڈر نے کہاکہ کانگریس اور بی جے پی کو ستر سال تک منڈیٹ ملا لیکن دونوں ہی جماعتیں عوام کی توقعات پر پورا اترنے میں ناکام ثابت ہوئیں اور ان کی پارلیمنٹ میں کارکردگی مایوس کن ہے ۔ انہوںنے کہاکہ حلقہ بھر میں بنیادی سہولیات کا فقدان سابق ممبران پارلیمنٹ کی نااہلیت کا ثبوت دیتاہے ۔انہوںنے عوام سے کہاکہ وہ بار بار آزمائے ہوئے لوگوں کو پھر سے نہ آزمائیں او رنہ ہی ان سے توقعات وابستہ کریں ۔ان کاکہناتھاکہ دونوںجماعتوںنے رائے دہندگان کے ساتھ دھوکہ دہی سے کام لیا اور ریاست میں فرقہ وارانہ ہم آہنگی کو نقصان پہنچایا ۔