ٹیسٹ نتائج بچے کی قدر کا تعین کرتے ہیں؟ توجہ طلب

رئیس یاسین

ہر کوئی انسان ایک جینئس ہے۔ اگر آپ مچھلی کو درخت پر چڑھنے کی صلاحیت سے پرکھیں گے تو وہ ساری زندگی یہ سوچ کر گزار دے گی کہ یہ بیوقوف ہے۔طلباء کو ان کی تعلیمی کارکردگی کی بنیاد پر جس امتیازی سلوک کا سامنا کرنا پڑ رہا ہے ،وہ ایک پرانی طرز عمل ہے جسے ہم اب بھی جاری رکھے ہوئے ہیں، جو کہ اب تک کافی حد تک معمول بن چکا ہے۔ اکثر دیکھا جاتا ہے کہ والدین اور یہاں تک کہ اساتذہ کو طالب علموں کی ناقص کارکردگی کے لیے ان کو مارنا،ان کی توہین کرتے اور ان کی تذلیل کرتے ہوئے پاتے ہیں۔ اگر ہم اب بھی ایک بچے کی قدر کو کاغذ کے ٹکڑے پر جوڑنے کا رجحان رکھتے ہیں، تو یہاں مروجہ سوال یہ ہے کہ اس کی بنیادی وجہ کیا ہے کہ یہ روایتی ذہنیت 21ویں صدی میں بھی ہمارے درمیان موجود ہے؟بنیادی وجوہات میں سے ایک، بلاشبہ، ہمارے تعلیمی نظام کی منفرد خصوصیات ہیں، خاص طور پر جس کی پیروی ہندوستانی معاشرہ کرتی ہے۔ ہمارا ہندوستانی نظام تعلیم ہمیشہ اس بات کی طرف مائل ہوتا ہے اور معاشرے کو اس بات کا اندازہ لگاتا ہے کہ وہ بچے کو اس بات کا اندازہ لگا سکتا ہے کہ وہ اسکولوں اور کالجوں میں پڑھے جانے والے اسباق کو کاغذ کے شیٹ پر کس حد تک کامیاب ہو گیا ہے، بجائے اس کے کہ وہ ان چیزوں کو عملی طور پر اپنی حقیقی زندگی کے حالات میں لاگو کرنے کے کتنے اہل ہیں۔ یہ غیر منطقی اہمیت روایتی طور پر سابقہ ​​پر مجبور ہونے کی وجہ سے طلباء اچھے نمبروں کی خاطر پڑھتے ہیں اور اپنے مستقبل کی خاطر کبھی نہیں سیکھ پاتے۔ اس کے علاوہ، ہمارا معاشرہ جس طرح سے بچوں کے اپنے ماہرین تعلیم کے علاوہ جذبوں، صلاحیتوں اور خوابوں کی کثرت کو تسلیم کرنے میں ناکام رہتا ہے، اس سے ان کے سروں پر یہ غیر محسوس دباؤ پہ دباؤ پڑتا ہے کہ وہ زیادہ تر اپنی تعلیم سے لطف اندوز ہونے کی زحمت نہیں کرتے۔ یہ طلباء، کم از کم ان میں سے اکثریت کو یہ یقین کرنے کی شرط ہے کہ کامیابی کا واحد راستہ تعلیم کے ذریعہ ہے اور کوئی بھی چیز جس کا تعاقب کیا جائے ،وہ وقت اور محنت کے قابل نہیں ہے۔ اس سے بہت سی صلاحیتیں دریافت نہیں ہوتیں اور صلاحیتیں غیر استعمال ہوجاتی ہیں۔ان نتائج کو مدنظر رکھتے ہوئے جن کے ساتھ تعلیمی اداروں میں ان کی ناقص کارکردگی کی بنیاد پر امتیازی سلوک کیا جاتا ہے، وہ پریشانی، طبی ڈپریشن اور یہاں تک کہ خودکشی کے خیالات کی بدترین اقساط سے گزرتے ہیں۔ صرف 2019 میں، ہم نے بھارت میں خودکشیوں کی وجہ سے 10,000 سے زیادہ طلباء کی قیمتی جانیں ضائع کیں، ان میں سے زیادہ تر اُس وقت کے آس پاس جب بورڈ اور پبلک امتحانات کے نتائج سامنے آئے۔ یہ دیکھنا بھی حیران کن ہے کہ سروے بتاتے ہیں کہ ہندوستان میں ہر 10 میں سے کم از کم 4 طالب علم طبی ڈپریشن سے گزرتے ہیں۔مجھے یقین ہے کہ اب وقت آگیا ہے کہ ہم اپنے آپ سے ایک بہت اہم سوال پوچھیں۔ ایسا کیا ہے کہ بحیثیت معاشرہ ہم ایسا ہونے سے روکنے کے لیے کیا کر سکتے ہیں؟ سب سے پہلے، یہ سمجھنے کی کوشش کریں کہ پوری دنیا کا بہترین ذہانت کا امتحان بھی کسی بچے کے مستقبل کی کامیابی کا تعین نہیں کر سکتا۔ بچوں کو کسی معیاری امتحان کے لیے تیار کرنے کے بجائے ان کی دہلیز پر ان کا انتظار کر رہی خوفناک دنیا کے لیے تیار کریں۔ دوم، موجودہ صورت حال کا تجزیہ کریں اور سمجھیں کہ ان میں سے زیادہ تر بچوں نے یا تو اس لیے اپنی جان لی کہ وہ اپنے نتائج کا سامنا کرنے سے خوفزدہ تھے یا اس لئے کہ وہ کسی تعلیمی مقصد سے محروم تھے۔ مجھے یقین ہے کہ انہیں یہ یقین دلانے سے بچا جا سکتا ہے کہ کوئی بھی داخلہ امتحان کبھی بھی یہ طے نہیں کر سکتا کہ ان کی زندگی کتنی کامیاب ہے۔ انہیں سمجھائیں کہ تعلیمی اہداف کا ہونا ہمیشہ ضروری نہیں ہے، ضروری ہے کہ وہ اپنے خوابوں کا تعاقب کرتے رہیں، چاہے وہ کچھ بھی ہوں۔ تیسرا، انہیں مہربان، ہمدرد، پرعزم، پرجوش، کارفرما، اور اپنی زندگی کے تمام شعبوں میں پر اعتماد ہونا سکھائیں کیونکہ یہ انہیں منفرد بناتا ہے۔ اس دنیا میں ہمارے پاس پہلے سے ہی ڈاکٹروں اور انجینئروں کا ایک گروپ ہے، ہم میں انسانوں کی کمی ہے، انہیںسب سےپہلے ایک بہترین بننا سکھائیں۔آخری لیکن کم از کم انہیں یقین دلائیں کہ ناکام ہونا ٹھیک ہے، گرنا ٹھیک ہے، لڑکھڑانا ٹھیک ہے۔لیکن چھوڑنا کبھی ٹھیک نہیں ہے۔
(رابطہ ۔:7006760695)
[email protected]