ٹاٹا انسٹی ٹیوٹ ممبئی کی کینسر کے علاج پر10سال بعد کامیابی تجربوں کا دورانیہ مکمل،دوائی جون جولائی میںمارکیٹ میں دستیاب ہوگی :محققین

 عظمیٰ مانٹیرنگ ڈیسک

ممبئی // ٹاٹا انسٹی ٹیوٹ ممبئی نے بھارت میںکینسر کی تحقیق اور علاج کے بارے میں ایک بڑی پیشرفت کا دعویٰ کرتے ہوئے کہاکہ اس تحقیق کے مطابق دوسری مرتبہ کینسر کا شکار ہونے سے بچاجاسکتا ہے۔ 10سال تک جاری رہنے والی تحقیق سے جڑے ڈاکٹروں کا کہنا ہے کہ انہوں نے دوائی نہ صرف دوسری مرتبہ ہونے والے کینسر کو بچائے گی بلکہ سرطان کے علاج کے دوران ریڈیشن تھرپی اور کیمو تھرپی سے ہونے والے مضر صحت اثرات کو بھی 50فیصد کم کرے گی۔ ٹاٹامیموریل ہسپتال ممبئی کے سینسر کینسر سرجن ڈاکٹر راجندر بائوڈے نے کہا ’’ کینسر خلیوں کو چوہوں کو دیا گیا اور اس کی وجہ سے چوہوں میں ٹیومر پیدا ہوگیا ۔ انہوں نے کہا کہ بعد میں ان چوہوں کو ریڈیشن تھرپی، کیمو تھرپی اور جراحی کے علاج کے عمل سے گذارا گیا۔ انہوں نے کہا کہ تحقیق میں یہ بات پائی گئی کہ کینسر سے خلیا مرجاتی ہیں تو وہ اپنے پیچھے Chromatin نامی زرات کو چھوڑ جاتی ہیں جو خون کے ذریعے جسم کے دیگر حصوں میں پھیل کر ان کو نقصان پہنچاتی ہیں اور ان میںدوبارہ کینسر پیدا کرتی ہیں۔ ٹاٹا کے محققین کا کہنا ہے کہ مرنے والی کینسر خلیاں Chromatin نامی ذرات کو چھوڑتی ہیں جو صحت مند خلیوں پر اثر انداز ہوکر ان کو سرطان کی خلیوں میں تبدیل کرتی ہیں اور اسکی وجہ سے مریض کو دوسری مرتبہ کینسر ہوتا ہے۔ انہوں نے کہا کہ اس سے نپٹنے کیلئے ڈاکٹروںنے چوہوں کو pro-oxidant کی دوائی دی جوresveratrol اور تانبے کے زرات سے بنی تھی۔ انہوں نے کہا کہ اس تحقیق کا نام “Magic of R+Cu” رکھا گیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ دوائی سرطان کے علاج کیلئے استعمال ہونے والی ریڈیشن تھرپی اور کیموتھرپی کے مضر اثرات کو 50فیصد کم کرے گی۔ انہوں نے کہا کہ دوسری مرتبہ ہونے والے کینسر کو روکنے میں یہ 30فیصد کامیاب رہے گی۔ ان کا کہنا تھا کہ یہ دوائی لبلبہ ، پھپھڑوں اور منہ کے کینسر کے علاج میں بھی کامیاب رہے گی۔ انہوں نے کہا کہ ٹاٹا ہسپتال کے ڈاکٹر اس دوائی پر پچھلے ایک دہائی سے کام کررہے تھے۔ انہوں نے کہا کہ ادویات کو استعمال کرنے کی اجازت حاصل کرنے کیلئے فوڈ سیفٹی اینڈ سٹینڈاڈز اتھارٹی آف انڈیا(FSSAI)میں درخواست جمع کی گئی ہے اور اُمید ہے کہ اجازت جلد ملے گی۔ انہوں نے کہا کہ یہ دوائی جون جولائی سے مارکیٹ میں دستیاب ہوگی ۔ انہوں نے کہا کہ کینسر کے علاج کو بہتر بنانے میں یہ دوائی بہت مدد گار ثابت ہوگی۔ اور اسکی قیمت تقریباً 100روپے گی۔