ویلگام رامحال میں گرڈ اسٹیشن کے تحت آنے والے علاقوں میں بجلی بحران | 33ہزار کے وی ترسیلی لائین پر دبائو اضافی رسیونگ اسٹیشن جوڑنے کا شاخسانہ

کپوارہ//صارفین کو بلال خلل بجلی سپلائی فراہم کرنے کے محکمہ کے دعوئو ں کے برعکس کپوارہ میں ویلگام رامحال گرڈ اسٹیشن کے تحت آنے والے علاقوں میں بجلی کا بحران ہے جس کی وجہ لوگو ں میں محکمہ کے تئیں سخت نارااضگی پائی جار ہی ہے ۔ ویلگام رامحال میں قائم گرڈ اسٹیشن سے کرالہ پورہ ریسونگ اسٹیشن کے لئے 33ہزارکلو واٹ ترسیلی لائن نکلتی ہے، اس پر پہلے5رسیونگ اسٹیشنو ںجن میں کاری ہامہ ،ہری ترہگام ،کرالہ پورہ ،کیرن اور کرناہ شامل ہیں ،کو جو ڑ دیا گیا ہے جس کی وجہ سے کرالہ پورہ ویلگام 33ہزار ترسیلی لائن پر دبائو بڑھ جاتا ہے اور ویلگام گرڈ اسٹیشن اوور لو ڈ ہوتا ہے اور ان ریسونگ اسٹیشنو ںکے تحت آنے والے درجنو ں علاقوں میں بجلی کی آنکھ مچولی شروع ہوتی ہے ۔کرالہ پورہ ،ہری ترہگام ،کاری ہامہ ،کرناہ اور کیرن کے لوگو ں کا کہنا ہے کہ ان علاقوں میں گزشتہ10روز سے بجلی کا سخت بحران ہے اور ہر 5منٹ کے بعد بجلی سپلائی کا ٹ دی جاتی ہے ۔لوگو ں کا کہنا ہے کہ بجلی کی عدم دستیابی کی وجہ سے انہیں سخت مشکلات کا سامنا ہے ۔اس دوران محکمہ بجلی میں تعینات ایک ملازم نے اپنا نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بتایا کہ ویلگام گریڈ اسٹیشن سے کرالہ پورہ ریسونگ اسٹیشن تک جو 33ہزار ترسیلی لائن جاتی ہے اس پر 6ریسونگ اسٹیشنو ں کو جو ڑ دیا گیا ہے  جس کی وجہ سے اس لائن پر دبائو بڑھ جاتا ہے اور نتیجے کے طور ویلگام گرڈ اسٹیشن بجلی فراہم کرنے کاکام چھو ڑ دیتا ہے ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ نومبر سے اگرچہ بجلی سپلائی کا دبائو بڑھ جاتا ہے لیکن حال ہی میں تارت پورہ ریسونگ اسٹیشن چالو کرنے کے بعد کرالہ پورہ ویلگام 33ہزار ترسیلی لائن پر مزید دبائو بڑھ گیا  جس کے نتیجے میں یہ لائن زیادہ  دبائو برداشت نہیں کر سکتی اور بجلی سپلائی میں خلل پڑ جاتا ہے ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ محکمہ کو چایئے تھا کہ تارت پورہ رسیونگ اسٹیشن کو ڈولی پورہ ویلگام رسیونگ اسٹیشن کو بجلی فراہم کرنے والی33ہزار کے وی لائن سے جو ڑ دیاجاتا کیونکہ ویلگام کرالہ پورہ کی33ہزار ترسیلی لائن پر پہلے ہی ضرورت سے زیادہ دبائو ہے۔ذرائع سے یہ بھی معلوم ہوا ہے کہ کاری ہامہ اور ہری ریسونگ اسٹیشنو ں کے لئے اگرچہ ویلگام گرڈ اسٹیشن سے الگ پنل سے جو ڑنے کے لئے کھمبے نصب کئے گئے ہیں لیکن نامعلوم وجوہات  کی بنا پر اس پر کام رکا پڑا ہے ۔ذرائع کا کہنا ہے کہ کاری ہامہ اور ہری رسیونگ اسٹیشن کو الگ پنل پر بجلی سپلائی فراہم کی جائے گی تو کرالہ پورہ ،ترہگام ،رامحال ،کاری ہامہ اور کرناہ میں بجلی کے بحران پر قابو پایا جائے گا ۔اس حوالہ سے بارہ مولہ میں محکمہ بجلی کے سپر انٹنڈ نٹ انجینئر سے رابطہ کیا گیا لیکن انہو ں نے فون اٹھانے کی زحمت گوارہ نہیں کی ۔اس دوران کرالہ پورہ ریسونگ اسٹیشن کے تحت آنے والے علاقوں جن میں آلوسہ ،سلامت واری ،گوفہ بل ،شمناگ ،گوگلوسہ ،دردسن ،ریشی گنڈ ،گزریال ،وارسن اور سنگڑانہ شامل ہیں ،کے لوگو ں کا کہنا ہے کہ نومبر کے مہینے سے ان علاقوں میں بجلی کی قلت کاسامنا ہے ۔ان علاقوں کے لوگو ں کا کہنا ہے کہ ان کو گوگلسہ فیڈر سے بجلی سپلائی فراہم کی جاتی ہے لیکن نومبر شروع ہوتے ہیں مذکورہ فیڈر کو دوحصوں میں تقسیم کیا جاتا ہے جس کے تحت ایک رات گزریال اوراس کے تحت آنے والے علاقوں جبکہ ایک رات شمانگ اوراسکے تحت آنے والے علاقوں کو بجلی سپلائی فراہم کی جاتی ہے ۔ان علاقوں کے لوگو ں کا کہنا ہے کہ یہ سلسلہ گزشتہ دو برسوں سے جاری ہے اور دوران موسم سرما میں لوگو ںکو سخت مشکلات کاسامنا کرنا پڑتا ہے ۔مقامی لوگو ں نے بتایا محکمہ نے بجلی کے بحران اور صارفین کوبلا خلل بجلی فراہم کرنے کے لئے گزریال علاقہ کو ایک نئے فیڈر سے جو ڑنے کے لئے کرالہ پورہ ریسونگ اسٹیشن سے بجلی کے کھمبے اور ترسیلی لائن بھی بچھا دی ہے لیکن ابھی تک ا س کو چالو نہیں کیا گیا جس کی وجہ سے لوگو ں کو سخت مشکلات کاسامنا ہے ۔مقامی لوگو ںنے محکمہ بجلی کے اعلیٰ حکام سے مطالبہ کیا کہ وہ فوری طور گزریال فیڈر کو چالو کر کے بجلی سپلائی فراہم کریں ۔