وکست بھارت مہم ایک انقلابی پہل زاویہ نگاہ

ضیا درخشان

گزشتہ ماہ نومبر میں شروع کی گئی وکست بھارت سنکلپ یاترا (وی بی ایس وائی) کے بینر تلے شروع کی گئی مہم آزاد بھارت کی تاریخ میں اپنی نوعیت کی پہلی مہم ہے۔ یہ مہم مرکزی حکومت کی جانب سے ملک کے اطراف و اکناف میں عام لوگوں کو مختلف شعبوں کے لیے پچھلی ایک دہائی میں تیار کی گئی اپنی فلیگ شپ فلاحی اسکیموں کے بارے میں آگاہ کرنے اور تعلیم دینے کی ایک سنجیدہ کوشش ہے۔
گزشتہ ایک دہائی میںنریندر مودی کی قیادت والی حکومت نے سماج کے ہر طبقے کے لیے درجنوں عوامی فلاح و بہبود کی اسکیمیں شروع کی ہیں۔ ان سکیموں کو آبادی کے ہدف گروپ کی موجودہ بنیادی ڈھانچے اور ضروریات کے مطابق ترتیب دینا ان سکیموں کی خاص بات ہے۔ اب وکست بھارت مہم نے ان اسکیموں میں مزید رنگ بھر دیا ہے کیونکہ یہ ان اسکیموں کے ذریعے حاصل ہونے والے فوائد کے بارے میں بڑے پیمانے پر بیداری پیدا کرکے ترقیاتی اقدامات کو اگلی سطح پر لے جا رہی ہے۔ صفائی کی سہولیات، لازمی مالی خدمات، بجلی کے کنکشن، ایل پی جی سلنڈر تک رسائی، غریبوں کے لیے رہائش، خوراک کی حفاظت، مناسب غذائیت، قابل اعتماد صحت کی دیکھ بھال، پینے کا صاف پانی وغیرہ جیسی اسکیموں کی وسیع تفصیلات مہم میں شامل ہیں۔
خاص طور پر جدید ذرائع ابلاغ کے ذرائع کا استعمال کرتے ہوئے ایوشمان بھارت، پی ایم جے اے وائی، پردھان منتری غریب کلیان انا یوجنا ؛ دین دیال انتیودیا یوجنا – قومی دیہی لائیولی ہوڈ مشن؛ پی ایم آواس یوجنا (دیہی)؛ پی ایم اجولا یوجنا؛ پی ایم وشواکرما؛ پی ایم کسان سمان؛ کسان کریڈٹ کارڈ (کے سی سی)؛ پی ایم پوشن ابھیان؛ ہر گھر جل – جل جیون مشن؛ دیہی علاقوں میں جدید ٹیکنالوجی کے ذریعے دیہاتوں کا سروے اور نقشہ سازی (ایس وی اے ایم آئی ٹی وی اے)؛ جن دھن یوجنا؛ جیون جیوتی بیمہ یوجنا؛ سرکھشا بیمہ یوجنا؛ اٹل پنشن یوجنا؛ پی ایم پی آر اے این اے ایم؛ نینو فرٹیلائزر وغیرہ، جیسی سکیموں کی تشہیر مختلف معاشروں اور کمیونٹیز کے سماجی و اقتصادی منظر نامے کو تبدیل کرنے کے لیے ایک طویل سفر طے کر رہا ہے۔
قابل ذکر بات یہ ہے کہ وِکِسِت بھارت مہم، جو اب تک کی سب سے بڑی عوامی رسائی اقدامات میں سے ایک ہے، کو 25 جنوری 2024 تک 2.55 لاکھ گرام پنچایتوں اور 3,600 سے زیادہ شہری بلدیاتی اداروں کا احاطہ کرنے کے لیے ترتیب دیا گیا ہے اور یہ ملک کے ہر ضلع تک پہنچ جائے گی۔ اس پہل کی بناوٹ میں ریاستی حکومتوں، ضلعی حکام، شہری مقامی اداروں اور گرام پنچایتوں کی فعال شرکت اور شمولیت کو بجا طور پر شامل کیا گیا ہے۔ مہم میں شامل اس پورے حکومتی عنصر نے کسی بھی سطح پر ناقص نقطہ نظر کی کوئی گنجائش نہیں چھوڑی ہے اور یہ عام لوگوں کو صحیح معلومات کی آگاہی کو یقینی بنائے گا۔
موقع پر ہی ہیلتھ کیمپ، آدھار اندراج، اور مائی بھارت رضاکارانہ اندراج جیسے خدمات کی فراہمی اور مہم کے دوران زرعی سرگرمیوں سے متعلق براہ راست مظاہرے یقینی طور پر یاترا کو تہوار کے انداز میں پیش کر رہے ہیں۔
قابل ذکر ہے کہ جن دھن یوجنا دنیا کی سب سے بڑی مالی شمولیت کی پہل ثابت ہوئی ہے جس نے کروڑوں لوگوں کو رسمی بینکنگ نظام میں لایا ہے۔ اب وکست بھارت مہم کے ذریعے اس اسکیم کے بارے میں بڑے پیمانے پر بیداری عوامی رابطے کو بڑھانے اور ڈیجیٹل انڈیا پلیٹ فارم کو استعمال کرنے اور انتہائی محفوظ طریقے سے اسکیم کے بے شمار فوائد حاصل کرنے کے لیے عوام کی رہنمائی کرنے جا رہی ہے۔
انشورنس اسکیموں کے تناظر میں وِکِسِت بھارت پہل بھارتی تبدیلی کا سبب ثابت ہوگی کیونکہ ضرورت پر مبنی بیمہ اسکیموں کے ذریعے خطرات کو کم کرکے آبادی کے بڑے حصے مستفید ہوسکتے ہیں۔
15 نومبر 2023 کو وِکست بھارت مہم کے آغاز کے موقع پر وزیر اعظم نریندر مودی کی تقریر کے ایک چھوٹے حصے کو ہی لیجئے، انہوں نے کہا، ’’ترقی یافتہ ہندوستان کے 4 ستون ہیں – پہلا – ہندوستان کی خواتین، ہماری خواتین کی طاقت دوسرا – ہندوستانی کسان، ہمارے مویشی پالنے والے، مچھلی پالسن سے وابستہ کسان، ہمارے خوراک فراہم کرنے والے۔ تیسرا – ہندوستان کا نوجوان، ہماری نوجوان طاقت چوتھا – ہندوستان کا متوسط طبقہ، ہندوستان کا غریب۔ ہم ان چار ستونوں کو جتنا مضبوط بنائیں گے، ترقی یافتہ ہندوستان کے ستون اتنے ہی بلند ہوں گے۔
اگر ہم مہم کے ڈھانچے اور اس کے پیچھے کار فرما ارادے پر نظر ڈالیں تو، جہاں تک پچھلے ایک دہائی میں تیار کی گئی سرکاری فلاحی اسکیموں کا تعلق ہے، وکست بھارت سنکلپ یاترا (وی بی ایس وائی) یقینی طور پر معلومات کی طاقت سے معاشروں/کمیونٹیوں کو بااختیار بنائے گی اور انہیں معلوماتی ذخائر میں تبدیل کرے گی۔
یہ بتانے کی ضرورت نہیں کہ اپنی نوعیت کی پہلی وکست بھارت مہم کے ذریعے چلائی گئی یہ بڑے پیمانے پر عوامی شمولیت خاص طور پر لوگوں کے نچلے طبقے کی سماجی و اقتصادی حیثیت کو بلند کرے گی۔
جہاں تک جموں اور کشمیر کے مرکز کے زیر انتظام علاقے کا تعلق ہے، وکست بھارت سنکلپ یاترا (وی بی ایس وائی) مرکزی حکومت کی ایک اور پہل ہے جس نے اس خطے کو ملک کے باقی علاقوں کے ساتھ ایک ہی جگہ پر کھڑا کر دیا ہے۔ آغاز کے دن بالترتیب راجوری اور بانڈی پورہ اضلاع کے بدھل اور گریز علاقوں سے مہم کا آغاز کرتے ہوئے، ٹھنڈی ہواؤں کا مقابلہ کرتے ہوئے، ان علاقوں کے باشندوں نے یاترا کا حصہ بنتے ہوئے جوش و خروش کا مظاہرہ کیا۔ اس کے آغاز کے بعد سے، اپنے عوام بالخصوص نوجوانوں کو مختلف سرگرمیوں کے لیے چل رہی اسکیموں کے فوائد سے آگاہ کرنے کے لیے یونین ٹیریٹری کے تمام اضلاع میں ضلعی انتظامیہ ایک فعال نقطہ نظر دکھا رہی ہے۔
جموں و کشمیر ملک کے سب سے موزوں خطوں میں سے ہے جہاں مالی تعلیم، سرکاری فلاحی اسکیموں کے بارے میں آگاہی اور ان اسکیموں تک آسانی سے رسائی کے لیے رہنمائی انتہائی اہمیت کی حامل ہے۔
اس مہم کے ذریعے معیشت کے مختلف شعبوں کے لیے روزگار پیدا کرنے کی نئی اسکیمیں غیر پہنچی ہوئی لوگوں تک پہنچیں گی۔ ان اسکیموں کی خصوصیات کے بارے میں جان لینے کے بعد، خواہشمندوں کے لیے بغیر کسی پریشانی کے فوائد حاصل کرنا آسان ہوگا۔
چونکہ جدید انفارمیشن ٹکنالوجی معیشت کے ہر شعبے میں زبردست تبدیلیاں لا رہی ہے، اس لیے یہ یاترا مرکز کے زیر انتظام علاقوں کے لوگوں کو تربیت دینے اور باصلاحیت بنانے کے لئے ڈیجیٹل انڈیا پلیٹ فارم کو اختیار اور محفوظ طریقے سے تلاش کرنے کے لیے ایک تربیتی ادارے کے طور پر کام کرے گی۔
بہرحال، بڑے پیمانے پر عوامی بیداری اور ترقیاتی اور فلاحی اسکیموں میں شرکت بھارت کو 2047 تک ایک ترقی یافتہ ملک بنانے میں انقالابی اقدام ثابت ہوںگے۔
)مصنفہ ایک فری لانسر ہے۔مضمون بشکریہ پی آئی بی سرینگر)
(نوٹ۔ اس مضمون میں ظاہر کی گئی آراء مضمون نگار کی خالصتاً اپنی ہیں اور انہیں کسی بھی طور کشمیر عظمیٰ سے منسوب نہیں کیاجاناچاہئے۔)