وزیر داخلہ کی زیر صدارت دلی میں اہم بیٹھک| ملی ٹینسی ختم کرنیکی ہدایت

نئی دہلی//مرکزی وزیر داخلہ امت شاہ نے جمعہ کو ہدایت دی کہ جموں و کشمیر میں سیکورٹی گرڈ کو مزید مضبوط کیا جانا چاہئے تاکہ سرحد پار سے دراندازی اور دہشت گردی کو ختم کیا جاسکے۔یہ ہدایت یہاں ایک اعلی سطحی میٹنگ میں دی گئیں جس کے دوران شاہ نے مرکز کے زیر انتظام علاقے میں سیکورٹی صورتحال کا جائزہ لیا۔جموں و کشمیر کے لیفٹیننٹ گورنر منوج سنہا، قومی سلامتی مشیر اجیت ڈوول، آرمی چیف جنرل مکند نروانے اور مرکزی اور جموں و کشمیر حکومتوں کے دیگر سینئر افسران نے میٹنگ میں شرکت کی۔ایک سرکاری بیان میں کہا گیا کہ وزیر داخلہ نے ہدایت کی کہ سرحد پار سے دراندازی اور دہشت گردی ختم کرنے کے لیے سیکورٹی گرڈ کو مزید مضبوط کیا جائے۔انہوں نے سیکورٹی ایجنسیوں کی کوششوں کی تعریف کی جس کی وجہ سے جموں و کشمیر میں پچھلے کچھ سالوں میںملی ٹینسی کے واقعات میں کمی آئی ہے۔بیان میں کہا گیا کہ ملی ٹینسی کے واقعات کی تعداد 2018 میں 417 سے کم ہو کر 2021 میں 229 رہ گئی ہے، جب کہ ہلاک ہونے والے سیکورٹی فورسز کے اہلکاروں کی تعداد 2018 میں 91 سے کم ہو کر 2021 میں 42 رہ گئی ہے۔بعد میں نامہ نگاروں سے بات کرتے ہوئے منوج سنہا نے کہا کہ وزیر داخلہ نے جموں و کشمیر میں ترقیاتی معاملات اور سیکورٹی کی صورتحال میں پیش رفت کی رفتار کا جائزہ لیا۔انہوں نے ایک گھنٹے تک جاری رہنے والی ملاقات کو بہت نتیجہ خیز قرار دیا۔سالانہ امرناتھ یاترا کو دوبارہ شروع کرنے کے امکان کے بارے میں پوچھے جانے پر، جو COVID-19 وبائی امراض کی وجہ سے پچھلے دو سالوں سے منعقد نہیں ہوئی ہے، سنہا نے کہا کہ اس سلسلے میں جلد ہی فیصلہ لیا جائے گا۔"کووڈ کی وجہ سے، یاترا گزشتہ دو سال منعقد نہیں ہو سکی۔ ہم صورتحال کا جائزہ لیں گے اورفیصلہ کریں گے ۔