وحشیانہ اور دلخراش واقعہ :گیلانی

سرینگر// حریت (گ)چیرمین سید علی گیلانی نے سمبل سوناواری میں 3سالہ معصوم بچی کے ساتھ پیش آئے جنسی زیادتی کے وحشیانہ اور دلخراش واقعے پر اپنے گہرے صدمے اور دُکھ کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ ایسے سانحات کا آئے روز وقوع پذیر ہونا ایک مہذب سماج کے لیے تازیانہ عبرت ہے۔ انہوں نے معاشرے میں پھیلی ہوئی شیطانی خباثت، بے راہ روی، بے حیائی اور منشیات کا بے دریغ استعمال کے حوالے قانون نافذ کرنے والے اداروں کی طرف سے خاموش تماشائیوں کا کردار ادا کرنے کی شدید ترین الفاظ میں تنقید کا نشانہ بناتے ہوئے کہا کہ ان اداروں میں بدترین قسم کی رشوت خوری نے انہیں اپنے فرائض انجام دینے میں مجرمانہ غفلت برتنے کا خوگر بنادیا ہے۔ حریت چیرمین نے سمبل میں ایک درندہ صفت انسان کی طرف سے ایک معصوم بچی کو اپنی ہوس کا نشانہ بنانے کا جرم صادر ہونے کے باوجود مطلوبہ قانونی کارروائی کرنے سے اجتناب کرنے پر پولیس انتظامیہ کی مذمت کرتے ہوئے کہا کہ کئی دن گزرنے کے باوجود پولیس حکام عوامی احتجاج کو نظرانداز کرکے ایسے گھناؤنی جرائم پر روک لگانے میں ناکامی کا منہ بولتا ثبوت فراہم کررہے ہیں۔ انہوں نے عوام آپسی اتحاد واتفاق کو بنائے رکھنے کی ایک دردمندانہ اپیل کرتے ہوئے کہا کہ وہ معاشرے میں پھیلی ہوئی برائیوں کا تدارک کرنے کے لیے جدید سائنسی اور مغربی علوم کے ساتھ ساتھ قرآن اور حدیث کی روشن تعلیمات کی طرف زیادہ توجہ دیں۔ اپنی محلہ کمیٹیوں کو منظم اور مربوط کرتے ہوئے اپنی نوجوان نسل کی راہنمائی کرنے میں کوئی بھی غفلت نہ بھرتیں۔ حریت راہنما نے ریاست جموں کشمیر کی متنازعہ حیثیت سے جڑے بیشتر معاملات کی حساسیت اور نزاکت کے حوالے سے عام لوگوں کی ذہنی رسائی سے بالا ہونے کا تذکرہ کرتے ہوئے کہا کہ چند برس قبل کٹھوعہ کے مقام پر آصفہ بیٹی کے ساتھ اُس وقت کے حکمرانوں کی آنکھوں کے سامنے جو کچھ ہوا وہ ان ہی حکمرانوں کی وجہ سے تاریخ کا ایک حصہ بن کے رہ گیا ہے۔ انہوں نے سمبل میں پیش آئے ایک اور سانحہ کا رونما ہونا یہاں بڑھتی ہوئی لاقانونیت کا ایک مُنہ بولتا ثبوت ہے۔