واگورہ نوگام سرینگر میں شبانہ مسلح تصادم،شوپیان کا جنگجو جاں بحق، ایک فرار

سرینگر //نوگام سرینگر کے مضافاتی علاقے میں ایک شبانہ تصادم کے دوران شوپیان کا جنگجو جاں بحق ہوا۔اسکی تحویل سے اسلحہ و گولہ بارود ضبط کرنے کا دعویٰ کیا گیا ہے۔بتایا جاتا ہے کہ ایک جنگجو فرار ہونے میں کامیاب ہوا۔پولیس نے کہا کہ منگل کی شب قریب 11بجکر 50منٹ پر سیکورٹی فورسز نے نوگام کے مضافات میں واگورہ کینہ ہامہ میںکم سے کم 2 جنگجوئوں کی موجودگی کی اطلاع ملنے پر محاصرہ کیا اور جونہی ایک میوہ باغ کو گھیرے میں لینے کی کوشش کی گئی تو یہاں موجود جنگجوئوں نے فورسز پر فائرنگ کی جس کے بعد طرفین کے درمیان گولیوں کا تبادلہ ہوا جو کافی دیر تک جاری رہا۔پولیس نے بتایا کہ اسکے بعد کوئی فائرنگ نہیں ہوئی لیکن صبح کے وقت گولیوں کا مختصر تبادلہ ہوا جس کے بعد پولیس نے ایک جنگجو کی لاش بر آمد کی۔صبح کے وقت پولیس نے اس بات کی جانکاری دیتے ہوئے ٹیوٹ میں کہا’’ایک جنگجو مارا گیا ہے جبکہ دیگر کی تلاش جاری ہے، مزید تفصیلات اس کے بعد آئیں گی‘‘۔پولیس نے بتایا کہ جموں و کشمیر پولیس اور سی آر پی ایف نے عسکریت پسندوں کی موجودگی کی اطلاع کے بعد علاقے میں ایک آپریشن شروع کیا جس کے بعد رات گئے فائرنگ کا تبادلہ ہوا۔ایک عہدیدار نے بتایا کہ تلاشی کے دوران فورسزکا مشتبہ مقام کے قریب پہنچنے کے بعد عسکریت پسندوں نے فائرنگ کردی۔انہوں نے بتایا کہ فائرنگ کا مقابلہ کیا گیا جس سے انکاؤنٹر کا آغاز ہوا۔ انہوں نے کہا ، "عسکریت پسندوں کے فرار ہونے سے بچنے کے لئے علاقے کے تمام خارجی راستوں اور داخلی راستوں کو سیل کردیا گیا تھا۔" پولیس نے بتایا کہ مقتول کی شناخت جنوبی کشمیر کے ضلع شوپیان کے وچی زینہ پورہ علاقے میں ویندینا میلہورا کے نوجوان اذیر اشرف ڈار ولد محمد اشرف ڈار کے نام سے ہوئی ہے۔اذیر اشرف  2 جنوری 2021 کو عسکریت پسندوں کی صفوں میں شامل ہوا تھا۔ انکاؤنٹر کے مقام سے ایک پستول ، ایک میگزین ، چھ راؤنڈ اور دو دستی بم برآمد ہوئے ۔
 
 

گوری پورہ صنعت نگر میں تلاشیاں

شوپیان کی دو بستیوں کا تیسری بار محاصرہ

نیوز ڈیسک
 
سرینگر //صنعت نگر اور بونہ گام شوپیان میں سیکورٹی فورسز اور پولیس نے تلاشی کارروائیاں کیں، تاہم کوئی گرفتاری عمل میں نہیں لائی گئی۔بدھ بعد دوپہر قریب ڈیڑھ بجے عثمانیہ کالونی گوری پورہ صنعت نگر کا 129بٹالین سی آر پی ایف اور پولیس کے سپیشل آپریشن گروپ نے محاصرہ کیا اور آدھی بستی کو گھیرے میں لیکر تلاشیاں لیں۔ایک گھنٹے تک تلاشیاں لینے کے بعد محاصرہ اٹھایا گیا۔ادھر44آر آر ، 14بٹالین سی آر پی ایف اور پولیس نے بونہ گام شوپیان کے کلے محلہ اور ریشی محلہ کا لگاتار دوسرے روز بھی محاصرہ کیا اور دن بھر تلاشی کارروائیاں جاری رکھیں۔پچھلے 6روز کے دوران مذکورہ بستیوں کا تین بار محاصرہ کیا گیا ہے۔