وال مارٹ اور فلپ کارٹ کے مابین سمجھوتہ

 جموں//کنفیڈریشن آف آل انڈیا ٹریڈرز (CAIT) کی کال پر چیمبر آف ٹریڈرز فیڈریشن (CTF)جموں نے پیر کے روز وال مارٹ اور فلپ کارٹ کے مابین ہوئے سمجھوتہ کے خلاف اپنے غم و غصہ کا اظہار کیا۔ مظاہرین کا کہنا تھا کہ امریکی کمپنی وال مارٹ اور ہندوستان کی بڑی ای کامرس کمپنی فلپ کارٹ کے مابین ہوئے اس سمجھوتہ سے ملک کے چھوٹے اور درمیانہ درجہ کے تاجروں پر برا اثر پڑے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ بین الاقوامی کمپنیاں ہندوستانی سرکار کی طرف سے دی جانے والی رعایت سے فائدہ اٹھانے کے لئے چور دروازہ سے مارکیٹ میں سیندھ لگا رہی ہیں۔ گاندھی نگر میں منعقدہ ایک مظاہرہ سے خطاب کرتے ہوئے جموں ٹریڈرز فیڈریشن کے صدر نیرج آنند نے کہا کہ ایک ایسے وقت میں جب ہندوستانی مارکیٹ نوٹ بندی اور جی ایس ٹی کی وجہ سے مشکل دور سے گزر رہی ہے ، ان دو بڑی کمپنیوں کے مابین ہونے والی ڈیل کی وجہ سے ملک کی درمیانی اور چھوٹی تجارت مارکیٹ کوبھاری خسارہ ہو گا۔ انہوں نے کہا کہ آج آن لائن پلیٹ فارم ہے تو کل اسے اوپن سٹوروں میں تبدیل کیا جا سکتا ہے ، اس سلسلہ میں ہر کوئی رٹیل چین چلا رہا ہے جس سے ہول سیلر، ڈسٹری بیوٹر اور چھوٹے پرچون بیوپاری سبھی متاثر ہوں گے۔ اس کے ساتھ ہی انڈسٹریل لیبر اور کاروبار کے ساتھ جڑا روزگار بھی رفتہ رفتہ ختم ہو جائے گا اور بے روزگاری میں اضافہ ہوگا۔ انہوں نے کہا کہ ہندوستان میں چھوٹے پرچون بیوپاری اور دکاندار ہی روزگار پیدا کرنے کا ایک بڑا ذریعہ رہ گئے ہیں جو اکائوٹنٹ ، کمپیوٹر آپریٹر اور دیگر اسامیاں مہیا کر کے روزگار فراہم کر رہے ہیں لیکن وال مارٹ جیسی کمپنیوں کے متعارف ہونے سے چھوٹے موٹے روزگار حاصل کرنے والوں کے مواقع ختم ہو جائیں گے۔