وادی میں این آئی اے کے چھاپے

سرینگر// قومی تحقیقاتی ایجنسی (این آئی اے ) نے منگل اور بدھ کو چھاپوں کا سلسلہ جاری رکھتے ہوئے سرینگر، پلوامہ اور شوپیاں اضلاع میں کل ملا کر 18 مقامات پر چھاپے مار کر 9 افراد کو گرفتار کیا ۔این آئی اے کی طرف سے بدھ کو دو بیان جاری کئے گئے۔پہلے بیان میں کہا گیا ہے کہ ملی ٹنسی سازش کیس کے سلسلے میں این آئی اے نے سرینگر، پلوامہ اور شوپیاں اضلاع میں 16 مقامات پر چھاپے مار کر چار افراد کو گرفتار کیا۔ ایجنسی نے گرفتار شدگان کی شناخت وسیم احمد صوفی ساکن چھتہ بل سرینگر، طارق احمد ڈار ساکن سولنہ شیر گڑھی سرینگر، بلال احمد میر ساکن پارمپورہ سرینگراور طارق احمد بافندہ ساکن راجوری کدل سرینگر کے بطور کی ہے ۔دوسرے بیان میں کہا گیا ہے کہ سرینگر میں مزید دو مقامات پر چھاپے ڈالے گئے اور 5افراد کی گرفتاری عمل میں لائی گئی۔ جن افراد کو گرفتار کیا گیا ان میں محمد حنیف چرالو ساکن سرینگر، محمدحفیظ ساکن بڈگام،اویس احمد ڈار ساکن پلوامہ، متین احمد بٹ ساکن شوپیان اور عاف فاروق بٹ ساکن سرینگر شامل ہیں۔بیان میں کہا گیا ہے چھوپوں کے دوران الیکٹرانک آلات اور جہادی کاغذات ضبط کئے گئے ہیں۔ترجمان نے اپنے بیان میں کہا’’ابتدائی تحقیقات کے مطابق گرفتار شدگان مختلف جنگجو تنظیموں کے ساتھ اعانت کاروں کی حیثیت سے کام کررہے تھے اور وہ جنگجوؤں کو جنگجو یانہ کارروائیاں انجام دینے کے لئے منطقی و دیگر سپورٹ فراہم کر رہے تھے ‘‘۔انہوں نے کہا’’یہ کیس کالعدم جنگجو تنظیموں  لشکر طیبہ، جیش محمد، حزب المجاہدین، البدر اور ان سے وابستہ دیگر ٹی آر ایف جیسی تنظیموں کی طرف سے جموں و کشمیر، دلی اور دوسرے بڑے شہروں میں کارروائیاں انجام دینے کے بارے میں موصولہ اطلاعات کے متعلق درج کیا گیا ہے ‘‘۔بیان میں کہا گیا کہ ان جنگجو تنظیموں کے اعانت کار ہمسایہ ملک میں بیٹھے اپنے ہینڈلرس اور کمانڈروں کے ساتھ سازشیں کر رہے ہیں اور یہاں مقامی نوجوانوں کو بندوق اٹھانے کے لئے تیار کر رہے ہیں۔انہوں نے بیان میں کہا کہ ان جنگجوؤں نے کئی پر تشدد کارروائیاں انجام دی ہیں جن میں عام شہریوں اور سیکورٹی فورسز اہلکاروں کی ہلاکتیں اور وادی میں خوف و دہشت کا ماحول پیدا کرنا شامل ہے ۔
 
 

جعلی اسلحہ لائسنس معاملہ 

سابق بی ایس ایف  جوان کے گھر پر چھاپہ

بھنڈ( مدھیہ پردیش)/یو این آئی/جموں و کشمیر سے تیار جعلی اسلحہ لائسنس معاملہ میں مرکزی تفتیشی بیورو (سی بی آئی) نے ضلع بھنڈ کے گورمی تھانہ علاقہ کے کچناؤ کلاں گاؤں میں سابق بی ایس ایف جوان کے گھر پر چھاپہ مارا۔ ذرائع کے مطابق منگل کو بھوپال سے آئی سی بی آئی کی ٹیم جعلی اسلحہ لائسنس سے متعلق دستاویزات کی تحقیقات کے لیے سابق بی ایس ایف جوان کے گھر آئی تھی۔ بتایا گیا ہے کہ سی بی آئی نے پرمود کے گھر سے کچھ دستاویزات برآمد کی ہیں۔ سی بی آئی کی ٹیم بی ایس ایف کے سابق جوان کے گھر پر تقریباً دو گھنٹے تک رہی۔ خیال رہے فوج کے جوان سے سی بی آئی پہلے بھی کئی بار اس معاملہ میں پوچھ گچھ کرچکی ہے۔ضلع کے لوگوں کی ایک بڑی تعداد کے پاس جموں و کشمیر سے بنائے گئے اسلحہ لائسنس ہیں۔ بھوپال سے سی بی آئی کی8 رکنی ٹیم انسپکٹر ابھیشیک سوارنکر کی قیادت میں ضلع بھنڈ کے گورمی تھانہ علاقہ کے کچناؤ کلاں گاؤں میں سابق جوان پرمود شرما کے گھر پہنچی تھی۔