نیشنل کانفرنس کے بزرگ رکن اور سابق ممبر اسمبلی گاندربل محمدمقبول بٹ 91برس کی عمر میں فوت

گاندربل//نیشنل کانفرنس کے بزرگ لیڈراورسابق ممبراسمبلی محمدمقبول بٹ ساکن تولہ مولہ 91سال کی عمرمیں انتقال کرگئے ۔موصوف گاندربل میں کافی مقبول تھے اورلوگ اُ نکی کافی عزت کرتے تھے ۔محمد مقبول بٹ گریجویشن مکمل کرنے کے بعد گورنمنٹ ہائی سکول گاندربل میں بطور استاد چندماہ تک تعینات رہے جس کے بعد انہوں نے علی گڑھ مسلم یونیورسٹی میں دو سال زیر تعلیم رہنے کے بعد ایل ایل بی کی ڈگری حاصل کی۔علی گڑھ مسلم یونیورسٹی سے فارغ ہونے کے بعد موصوف نے وکالت شروع کی جس دوران ان کا رحجان سیاست کی طرف بڑھنے لگا۔ انہوں نے کانگریس پارٹی میں شمولیت اختیار کی اور 1967میں ان کو میر صادق نے گاندربل سے کانگریس کا ٹکٹ فراہم کیا جہاں ان کے مقابلے کچھ امیدواروں کے کاغذات نامزدگی مسترد کردیئے گئے اور موصوف بلا مقابلہ کامیاب ہوگئے۔انتخابات کے فوراً بعد مرحوم بخشی غلام محمد کی پارٹی کے امیدوار محمد یوسف نے اپنے کاغذات نامزدگی مسترد کرنے پر عدالت عالیہ کا دروازہ کھٹکھٹایااور مرحوم محمد مقبول بٹ نے اسمبلی کی رکنیت سے استعفیٰ دے دیا۔1972 میں میر قاسم نے محمد مقبول بٹ کو گاندربل سے کانگریس کا ٹکٹ فراہم کیا۔انہوں نے اپنے مدمقابل جماعت اسلامی کے امیدوار غلام محمد گنائی کو شکست دی تاہم 1975 میں اندرا شیخ عبداللہ ایکارڑ کے تحت محمد مقبول بٹ کو دوسری مرتبہ حلقہ انتخاب سے مستعفی ہونا پڑا جہاں ضمنی انتخاب منعقد کئے گئے جس میں شیخ محمد عبداللہ نے جیت درج کی۔اس طرح مرحوم محمد مقبول بٹ دو مرتبہ گاندربل اسمبلی میں کامیاب ہوئے تھے تاہم صرف چار سال ممبر اسمبلی رہے۔مرحوم کے آخری رسوم میں لوگوںکی ایک بڑی تعدادنے شرکت کی۔پارٹی صدرڈاکٹر فاروق عبداللہ نے محمد مقبول بٹ کے انتقال پر گہرے صدمے کا اظہار کیاہے۔ انہوں نے اس سانحہ ارتحال پر مرحوم کے جملہ سوگواران کے ساتھ دلی تعزیت کا اظہار کیا اور مرحوم کی جنت نشینی کیلئے دعا کی۔ ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے موصوف کے انتقال کی خبر سنتے ہی اُن کے گھر جاکر پسماندگان کی تعزیت پرسی کی۔ اس موقع پر مرحوم کے حق میں دعائے مغفرت کی ۔ مرحوم کو خراج عقیدت پیش کرتے ہوئے ڈاکٹر فاروق عبداللہ نے کہا کہ موصوف کو اللہ نے خداداد صفات سے نوازا تھا۔انہوں نے مشکل ترین حالات میں بھی پارٹی کاساتھ دیا اور مرحوم شیر کشمیر شیخ محمد عبداللہ کے شانہ بہ شانہ رہے۔ پارٹی کے نائب صدر عمر عبداللہ،جنرل سکریٹری علی محمد ساگر، صوبائی صدر ناصر اسلم وانی، سینئر لیڈران میاں الطاف احمد ، محمد شفیع اوڑی، عبدالرحیم راتھر، چودھری محمد رمضان، شریف الدین شارق، محمد اکبر لون ، محمد سعید آخون، تنویر صادق، شیخ اشفاق جبار اور ایڈوکیٹ شوکت احمد میر نے بھی تعزیت کا اظہار کیا ہے۔ادھر اپنی پارٹی صدر سید محمد الطاف بخاری نے بھی گہرے دکھ اور صدمے کا اظہار کیا ہے۔ایک تعزیتی پیغام میں بخاری نے کہاکہ موصوف نے ہمیشہ لوگوں کی خدمت کے لئے کام کیا۔انہوں نے کہاکہ اُن کی وفات سے جموں وکشمیر کی سیاست میں ایک وسیع خلاء پیدا ہوگیا۔جموں کشمیر پردیش کانگریس کمیٹی کے صدر جی اے میر اور پیپلز ڈیموکریٹک فورم نے بھی محمد مقبول بٹ کے انتقال پر تعزیت کا اظہار کیا ہے۔