نوبیاہتا دلہن آگ میں جھلس کر لقمۂ اجل

بانہال // ضلع رامبن کے ہوچک اکڑال  میں ایک نو بیاہتا خاتون نے مبینہ طور پر اپنے جسم پر مٹی کا تیل چھڑک کر آگ لگا کر اپنی زندگی کا خاتمہ کیا۔ پولیس نے کیس درج کرکے تمام زاویوں سے معاملے کی تحقیقات شروع کی ہے۔ ضلع ڈوڈہ کے دور افتادہ علاقے دیسہ کے ایک غریب گھرانے سے تعلق رکھنے والی اکیس سالہ سپنا دیوی کی شادی محض اٹھارہ روز قبل سندیپ سنگھ ساکنہ ہوچک تحصیل اْکڑال  کے ساتھ کی گئی ہے اور بتایا جاتا ہے کہ اس کا شوہر سندیپ سنگھ بی ایڈ کی تعلیم کیلئے جموں میں تھا۔  دیسہ سے اْکڑال پہنچے ورثا نے اسے قتل قرار دیتے ہوئے اس کی تحقیقات اور لڑکی کے ساس سسر کی فوری گرفتاری کا مطالبہ کیا ہے۔ انہوں نے کہا کہ یہ کیسے ممکن ہے کہ پاس کے کمرے میں بہو آگ لگا کر خودکشی کرے اور ساتھ کمرے میں سوئے ساس سسر کو موت ہونے تک اس کی خبر نہ ملے۔ انہوں نے کہا کہ واقع کی شام لڑکی نے اپنے والد سے دیسہ میں فون پر بات کی اور خیر خیریت کے دوران سپنا نے فون پر رویا بھی لیکن مائیکے والوں نے سمجھا شاید گھر کی یاد کی وجہ سے روئی ہے۔ انہوں نے الزام لگایا کہ سپنہ دیوی کو قتل کرنے کیلئے باضابط سازش رچی گئی ہے اور اسے مبینہ طور آگ کے حوالے کیا گیا ہے اور اس کی اعلی سطحی تحقیقات کی جانی چاہئے ۔ پیر کی صبح واقع کی اطلاع ملتے ہی پولیس سٹیشن رامسو اور پولیس پوسٹ اْکڑال سے انسپکٹر جاوید اقبال کی قیادت پہنچی پولیس ٹیم نے لاش کو اپنی تحویل میں لے کر اکھڑہال کے ہسپتال میں پوسٹ مارٹم کے لئے پہنچایا ، جہاں دیسہ سے اس کے ورثا اور جموں سے اسکا شوہر بھی پہنچ گئے اور قانونی لوازمات کے بعد لڑکی کو آخری رسومات کیلئے لواحقین کے سپرد کیا جارہا ہے ۔ پولیس نے اس کیس میں تمام زاویوں سے تحقیقات کا آغاز کیا ہے تاکہ اس واقع  کی اصل وجوہات کا پتہ لگایا جاسکے۔