نواکدل میں آگ کی 2وارداتوں میں 8 مکانات خاکستر

 سرینگر// شہر خاص کے نواکدل علاقہ میںآگ کی 2 الگ الگ وارداتوں میں 8 رہائشی مکانات  اوران میں موجودگھریلوسامان مکمل طورپرخاکسترہوگیا،جسکے نتیجے میں متاثرہ کنبے کروڑوں روپے مالیت کی املاک اورگھریلوسامان سے ہاتھ دھوبیٹھے ۔ بلبل لنکرنواکدل علاقہ میں جمعہ کو صبح 6بجے نمازفجراداکرنے کیلئے نزدیکی مسجدمیں جارہے کچھ نمازیوں نے ایک مکان سے شعلے بھڑکتے دیکھے ۔نمازیوں کے شورمچانے پرپوری بستی کے لوگ گھروں سے باہرآئے اورانہوں نے آگ کی زدمیں آچکے مکان کوبچانے کی کوشش کی لیکن وہ اسمیں کامیاب نہیں ہوئے ۔عینی شاہدین نے بتایاکہ آگ نے تیزی کیساتھ پھیلتے ہوئے نزدیکی رہائشی مکانات کوبھی اپنی لپیٹ میں لے لیاجسکے نتیجے میں یہاں ہوکاعالم بپاہوا۔محکمہ فائراینڈایمرجنسی سروسزکواسکی اطلاع دی گئی توآگ بجھانے کیلئے مخصوص کئی گاڑیاں اورمتعلقہ اہلکاریہاں پہنچ گئے ۔بتایاجاتاہے کہ ایک درجن سے زیادہ فائرسروسزگاڑیوں ،متعلقہ اہلکاروں اورمقامی نوجوانوں نے آگ بجھانے اورلوگوں کوبچانے کی کارروائی میں حصہ لیاجبکہ لگ بھگ تین گھنٹے میں یہاں آگ پرقابوپایاگیا۔آگ کی اس واردات میں 5رہایشی مکانات مکمل طورپرخاکسترہوئے اوران میں موجودگھریلوسامان بھی راکھ کے ڈھیرمیں تبدیل ہوگیا۔ابھی بلبل لنکرعلاقہ میں آگ بجھانے کی کارروائی جاری تھی کہ نزدیک ہی واقع خندہ بھون میں8بجکر40منٹ پر ایک 3منزلہ مکان سے آگ نمودارہوئی جس نے قریبی 2مکانوں کو بھی تیزی کے ساتھ اپنی لپیٹ میں لے لیا وریہاں بھی آگ کی زدمیں آئے تینوں مکانات میں موجودساراگھریلوسامان راکھ کے ڈھیرمیں تبدیل ہوگیا۔آگ کی اس واردات میں جن میں شہریوں کے مکان خاکستر ہوئے ،اُن میں معراج الدین ، عاشق احمد خان ،رفیق احمد خان اور گلزار احمد شامل ہیں ۔ آگ کی ان دونوں وارداتوں میں متاثرہ کنبے کروڑوں روپے مالیت کی املاک اورگھریلوسامان سے ہاتھ دھوبیٹھے۔اُدھرپولیس ذرائع نے بتایاکہ ابتدائی شاہدسے لگتاہے کہ دونوں جگہوں پرآگ بجلی شارٹ سرکٹ کی وجہ سے نمودارہوئی تاہم دونوں حادثات کے حوالے سے الگ الگ کیس درج کرکے تحقیقات شروع کردی گئی ہے۔ادھر محکمہ فائر اینڈ ایمر جنسی سروسز کا کہنا ہے کہ آ گ سے ہوئے نقصان کا فوری تخمینہ لگانا ممکن نہیں اور مکمل جائزہ لینے کے بعد ہی کوئی حتمی رائے قائم کی جاسکتی ہے۔انہوں نے بتایا کہ آگ لگنے کی وجہ فوری طور معلوم نہیں ہوسکی ہے۔